: آپریشن عزمِ ا ستحکام:  پاک فوج کا  مثالی سٹریٹجک قدم 

علاقائی سلامتی اور داخلی استحکام کے تناظر میں پاکستان کو دہشت گردی اور شورش سے سیاسی عدم استحکام اور سماجی و اقتصادی مسائل تک کے بے شمار چیلنجز کا سامنا ہے۔ ان کثیر جہتی خطرات سے نمٹنے کے لیے، پاکستانی فوج نے گزشتہ برسوں میں کئی آپریشنز شروع کیے ہیں، جن میں سے ایک اہم ترین آپریشن عزمِ ا ستحکام ہے-یہ آپریشن ایک اسٹریٹجک کوشش کی نمائندگی کرتا ہے جس کا مقصد پچھلی فوجی مہمات کے ذریعے حاصل ہونے والے فوائد کو مستحکم کرنا اور ملک میں طویل مدتی استحکام اور امن کو یقینی بنانا ہے۔ اس مضمون میں آپریشن عزمِ ا ستحکام کی پیچیدگیوں کا تذکرہ کیا گیا ہے، اس کے مقاصد، اس پر عمل درآمد، اثرات اور پاکستان کی سلامتی کے منظر نامے پر وسیع تر مضمرات کا جائزہ لیا گیا ہے۔آپریشن عزمِ ا ستحکام کی تفصیلات میں جانے سے پہلے، اس تاریخی تناظر کو سمجھنا بہت ضروری ہے جس کی وجہ سے اس طرح کے فوجی اقدام کی ضرورت تھی۔ خاص طور پر افغانستان کی سرحد سے ملحقہ قبائلی علاقوں میں دہشت گردی کے مسلسل خطرے کی وجہ سے پاکستان کی داخلی سلامتی کی صورتحال انتہائی نازک ہے۔ ضرب عضب اور ردالفساد جیسی کارروائیاں دہشت گردوں کے نیٹ ورکس کو ختم کرنے اور امن و امان کو بحال کرنے میں اہم کردار ادا کرتی تھیں۔ تاہم، بقایا خطرات اور پائیدار امن کی ضرورت نے ایک زیادہ جامع اور پائیدار نقطہ نظر کا مطالبہ کیا، جس کے نتیجے میں آپریشن عزمِ استقامت کا آغاز ہوا۔آپریشن عزمِ ا ستحکام کے مقاصد مندر ذیل ہیں فوائد کا استحکام: 1آپریشن کا مقصد پچھلی فوجی مہموں کے ذریعے حاصل کی گئی کامیابیوں کو مستحکم کرنا ہے، اس بات کو یقینی بنانا کہ دہشت گردوں سے پاک کیے گئے علاقے دوبارہ افراتفری میں نہ پڑ جائیں۔2سرحدی سلامتی کو مضبوط بنانا: پاکستان کی غیر محفوظ سرحدوں کو دیکھتے ہوئے، خاص طور پر افغانستان کے ساتھ، دہشت گردوں کی سرحد پار سے دراندازی کو روکنے کے لیے سرحدی حفاظت کو بڑھانا ایک کلیدی مقصد ہے 3سماجی و اقتصادی ترقی: یہ تسلیم کرتے ہوئے کہ صرف فوجی کارروائی دیرپا امن کی ضمانت نہیں دے سکتی، آپریشن بدامنی کی بنیادی وجوہات کو حل کرنے کے لیے متاثرہ علاقوں میں سماجی و اقتصادی ترقی پر زور دیتا ہے۔4سیکورٹی فورسز کی صلاحیت کی تعمیر: مستقبل کے خطرات سے مؤثر طریقے سے نمٹنے کے لیے پاکستان کی سیکورٹی فورسز بشمول فوج، پولیس اور نیم فوجی یونٹوں کی آپریشنل صلاحیتوں کو بہتر بنانا5کمیونٹی کی مشغولیت اور بحالی: مقامی کمیونٹیز کا اعتماد اور حمایت حاصل کرنے کے لیے ان کے ساتھ مشغول ہونا، اور بے گھر آبادیوں کی بحالی میں سہولت فراہم کرنا…آپریشن عزمِ ا ستحکام کے نفاذ میں ایک کثیر الجہتی نقطہ نظر شامل ہے، جس میں فوجی کارروائی کو ترقیاتی اقدامات اور تزویراتی اتحاد کے ساتھ ملایا گیا ہے۔ عملدرآمد کی حکمت عملی کے اہم اجزاء￿  میں شامل ہے  فوجی کارروائیاں: دہشت گردوں کے بقایا ٹھکانوں کو ختم کرنے اور ان کے دوبارہ سر اٹھانے کو روکنے کے لیے ہدف بنائے گئے فوجی آپریشن جاری ہیں۔ ان حملوں کی منصوبہ بندی اور ان پر عمل درآمد کیا جاتا ہے تاکہ باہمی نقصانات اور شہری ہلاکتوں کو کم کیا جا سکے۔2انٹیلی جنس پر مبنی آپریشنز: انٹیلی جنس اکٹھا کرنے کی جدید تکنیکوں کا فائدہ اٹھاتے ہوئے، یہ آپریشن ممکنہ خطرات کے خلاف پیشگی حملوں پر مرکوز ہے۔ ان کارروائیوں کی کامیابی کے لیے مختلف انٹیلی جنس ایجنسیوں کے درمیان تعاون بہت ضروری ہے.3بہتر بارڈر مینجمنٹ: باڑ کی تعمیر، نگرانی کے نظام، اور نئی سرحدی چوکیوں کا قیام غیر قانونی کراسنگ اور اسلحے کی اسمگلنگ کو روکنے کے لیے لازمی ہیں4.ترقیاتی منصوبے: آپریشن کے ایک اہم پہلو میں تعلیم، صحت کی دیکھ بھال، بنیادی ڈھانچے، اور اقتصادی بااختیار بنانے میں ترقیاتی منصوبے شروع کرنا شامل ہے۔ ان منصوبوں کا مقصد مقامی آبادیوں کے معیار زندگی کو بہتر بنانا اور انتہا پسندانہ نظریات کی اپیل کو کم کرنا ہے۔5صلاحیت کی تعمیر اور تربیت: سیکورٹی فورسز کے لیے مسلسل تربیتی پروگرام منعقد کیے جاتے ہیں تاکہ انسداد دہشت گردی اور انسداد بغاوت کی کارروائیوں میں ان کی مہارتوں کو بڑھایا جا سکے۔ اس میں آلات کو جدید بنانا اور نئی ٹیکنالوجیز کو اپنانا شامل ہے6.کمیونٹی کی شمولیت: فیصلہ سازی کے عمل میں مقامی کمیونٹیز کو شامل کرنے کی کوششیں کی جاتی ہیں، اس بات کو یقینی بناتے ہوئے کہ ان کی ضروریات اور خدشات کو دور کیا جائے۔ یہ عوام کے درمیان ملکیت اور تعاون کے احساس کو فروغ دیتا ہے ٭آپریشن اعظم استحکم کے اثرات کا اندازہ مختلف لینز سے لگایا جا سکتا ہے، بشمول سیکورٹی، سماجی و اقتصادی ترقی اور علاقائی استحکام۔1بہتر سیکورٹی: سب سے فوری نتائج میں سے ایک ماضی کے غیر مستحکم علاقوں میں سیکورٹی کی بہتر صورتحال ہے۔ دہشت گردی کی سرگرمیوں میں کمی اور امن و امان کی بحالی نے شہریوں کو زیادہ محفوظ ماحول فراہم کیا ہے2.سماجی و اقتصادی پیشرفت: بنیادی ڈھانچے، تعلیم اور صحت کی دیکھ بھال کی خدمات میں بہتری کے ساتھ ترقیاتی منصوبوں نے پھل دینا شروع کر دیا ہے۔ ان ترقیوں نے رہائشیوں کے لیے زندگی کے بہتر معیار میں حصہ ڈالا ہے اور کچھ سماجی و اقتصادی تفاوتوں کو دور کرنا شروع کر دیا ہے۔3کمیونٹی ٹرسٹ اور تعاون: مقامی کمیونٹیز کے ساتھ مشغولیت عوام اور سیکورٹی فورسز کے درمیان اعتماد پیدا کرنے میں اہم رہی ہے۔ یہ رشتہ دیرپا امن اور استحکام کے لیے اہم ہے4.صلاحیت کی تعمیر: تربیت اور جدید کاری کی کوششوں نے پاکستان کی سیکورٹی فورسز کی آپریشنل صلاحیتوں میں نمایاں اضافہ کیا ہے، جو انہیں مستقبل کے خطرات کا مؤثر طریقے سے مقابلہ کرنے کے لیے تیار کر رہے ہیں۔5علاقائی استحکام: اپنی سرحدوں کو محفوظ بنا کر اور دہشت گرد گروپوں کے اثر و رسوخ کو کم کرکے، پاکستان نے وسیع تر علاقائی استحکام میں اپنا حصہ ڈالا ہے۔ اس کے پڑوسی ممالک اور بین الاقوامی شراکت داروں کے ساتھ تعلقات پر مثبت اثرات مرتب ہوتے ہیں.اپنی کامیابیوں کے باوجود، آپریشن عزمِ ا ستحکام کو کئی چیلنجز اور تنقیدوں کا سامنا کرنا پڑا ہے1.حاصلات کی پائیداری: حاصل کردہ فوائد کی طویل مدتی پائیداری کو یقینی بنانا ایک چیلنج ہے۔ دہشت گردی کی سرگرمیوں کو دوبارہ سر اٹھانے سے روکنے کے لیے مسلسل کوششوں کی ضرورت ہے۔

2.فوجی اور ترقیاتی کوششوں میں توازن: فوجی کارروائی اور ترقیاتی اقدامات کے درمیان صحیح توازن قائم کرنا بہت ضروری ہے۔ کسی بھی پہلو پر زیادہ زور مجموعی مقاصد کو نقصان پہنچا سکتا ہے۔3انسانی حقوق کے خدشات: انسداد دہشت گردی کی کئی کارروائیوں کی طرح، انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے حوالے سے بھی خدشات پائے جاتے ہیں۔ اس بات کو یقینی بنانا کہ کارروائیاں بین الاقوامی قانون کی حدود میں ہوں ضروری ہے4.سیاسی عدم استحکام: اندرونی سیاسی عدم استحکام اس طرح کی کارروائیوں کی تاثیر کو متاثر کر سکتا ہے۔ طویل المدتی حکمت عملیوں کے کامیاب نفاذ کے لیے مستقل سیاسی حمایت ضروری ہے۔
5.علاقائی حرکیات: پیچیدہ علاقائی حرکیات، خاص طور پر افغانستان کی صورت حال، چیلنجز کا باعث بنی ہوئی ہے۔ سرحد پار خطرات سے موثر انداز میں نمٹنے کے لیے پڑوسی ممالک کے ساتھ تعاون ضروری ہے…آپریشن عزمِ ا ستحکام دہشت گردی، شورش اور سماجی و اقتصادی تفاوت کے کثیر جہتی چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے پاک فوج کی جانب سے ایک جامع نقطہ نظر کی نمائندگی کرتا ہے۔ فوجی فوائد کو مستحکم کرکے، سرحدی حفاظت کو بڑھا کر، سماجی و اقتصادی ترقی کو فروغ دے کر، اور مقامی کمیونٹیز کے ساتھ مل کر، آپریشن کا مقصد ملک میں دیرپا امن اور استحکام قائم کرنا ہے۔ اگرچہ چیلنجز اور تنقیدیں موجود ہیں، آپریشن کے مجموعی اثرات مثبت رہے ہیں، جو ایک زیادہ محفوظ اور مستحکم پاکستان میں حصہ ڈال رہے ہیں۔ آپریشن عزمِ استقامت کی کامیابی پیچیدہ سیکیورٹی مسائل سے نمٹنے کے لیے ایک جامع حکمت عملی کی اہمیت کو واضح کرتی ہے اور اسی طرح کے سیاق و سباق میں مستقبل کے اقدامات کے لیے ایک ماڈل کے طور پر کام کرتی ہے۔

اُردو کیا ہے؟

محمد نوید اسلام  اُردو زبان کی کہانی اسلامی ثقافت کے ایک بے حد درخشاں باب کی ترجمانی ہے۔ اسلامی فتوحات اور مفتوحہ ممالک ...