حکومت پی آئی اے کی نجکاری کا ٹھوس جواز بتائے ، مطمئن نہ کیا تو روک دیں گے: ہائیکورٹ

31 جنوری 2018

لاہور(وقائع نگار خصوصی) لاہور ہائیکورٹ نے قومی ایئر لائن کی مجوزہ نجکاری کیخلاف دائر درخواست پر وفاقی حکومت، سول ایوی ایشن اور وزارت نجکاری سے 3 ہفتوں میں جواب طلب کر لیا۔جسٹس شاہد مبین نے کیس کی سماعت کی۔ درخواست گزارنے موقف اختیار کیا کہ حکومت ذاتی مفادات کیلئے قومی ایئر لائن من پسند افراد کو فروخت کرنا چاہتی ہے۔ وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کی اپنی ایئرلائن ہے ۔ وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی اپنی ائیر لائن کو ملکی اور بین الاقوامی روٹس دلانے کے لئے پی آئی اے کو نجکاری کے ذریعے اونے پونے فروخت کرنا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ آئین کے تحت ملکی اداروں کو فروخت نہیں کیا جا سکتا۔ قومی ائیر لائن دنیا بھر میں پاکستان کی شناخت اور سفیر کا درجہ رکھتی ہے۔انہوں نے استدعا کی کہ عدالت پی آئی اے کی نجکاری روکنے کا حکم دے۔ جس پر عدالت نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ حکومت قومی ایئر لائن کی نجکاری کا ٹھوس جواز بتائے۔ اگرعدالت کو مطمئن نہ کیا گیا تو ایئرلائن کی نجکاری روک دینگے۔ سماعت چار ہفتوں تک ملتوی کر دی۔