بینظیر قتل کیس، فیصلہ میرے خلاف نہیں صحت یابی کے بعد عدالتوں کا سامنا کرونگا: مشرف

05 ستمبر 2017
بینظیر قتل کیس، فیصلہ میرے خلاف نہیں صحت یابی کے بعد عدالتوں کا سامنا کرونگا: مشرف

اسلام آباد (آن لائن+ آئی این پی) آل پاکستان مسلم لیگ کے سربراہ اور سابق صدر جنرل (ر) پرویز مشرف نے سابق وزیراعظم بے نظیر بھٹو کے قتل کیس کے فیصلے پر ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ فیصلہ ان کے خلاف نہیں اور وہ صحت یابی کے بعد پاکستان آکر مقدمے کا سامنا کریں گے۔ آل پاکستان مسلم لیگ کی جانب سے جاری بیان کے مطابق پرویز مشرف نے کہا کہ میرا مقدمہ داخل دفتر ہے اور میں صحت یابی کے بعد پاکستان آکر عدالتوں کا سامنا کروں گا، جائیداد کی قرقی کے حوالے سے عدالتی فیصلے کا میری قانونی ٹیم باریک بینی سے جائزہ لے رہی ہے جس کے بعد میری یا میرے خاندان کی طرف سے قانونی چارہ جوئی کی جائے گی، سابق صدر کا یہ بھی کہنا تھا کہ بینظیر قتل کیس میں امریکی لابسٹ مارک سیگل کے بے معنی بیان کے علاوہ میرے خلاف کوئی ثبوت نہیں جبکہ میرے وکلا اس بیان کو بھی عدالت میں بے معنی اور فضول ثابت کر چکے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ بینظیر قتل کیس میں انہیں سیاسی بنیادوں پر ملوث کیا گیا، قتل کے ساتھ میرا کوئی تعلق نہیں نہ ہی بینظیر کے قتل سے میرا کوئی مفاد وابستہ تھا۔ میرے خلاف یہ مقدمہ مکمل بے بنیاد، جھوٹا اور خود ساختہ ہے جو محض سیاسی بنیادوں پر قائم کیا گیا۔ علاوہ ازیں سندھ حکومت نے پرویز مشرف کی گرفتاری کیلئے وفاق سے درخواست کا فیصلہ کرلیا۔ سندھ کے وزیر اطلاعات سید ناصر حسین شاہ نے کہا ہے کہ سندھ حکومت بینظیر کے قتل کیس میں اشتہاری قرار دیے گئے پرویز مشرف کی انٹرپول سے گرفتاری کے لیے وفاقی حکومت سے درخواست کرے گی، معاملے پر پیش رفت وزیراعلی سندھ کی حج سے وطن واپسی پر ہوگی۔ روہڑی میں صحافیوں سے گفتگو میں ناصر شاہ نے کہا کہ بے نظیر بھٹو کی شہادت کے بعد ثبوت مٹانے کی کوشش کی گئی اور جس طرح عدالت نے پولیس والوں کو سزائیں دی ہیں، اس سے تو پرویز مشرف مجرم بنتے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ پکڑے گئے دہشت گردوں کو عدالت نے بری کیا جس کی مذمت کرتے ہیں۔وزیر اعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے کہا ہے کہ بینظیر قتل کیس میں پرویز مشرف جوابدہ ہیں، عدلیہ نے پرویز مشرف کو باہر جانے کی اجازت دی ہے اور وہی اسے واپس لائے گی، پی پی پی قیادت بینظیر بھٹو قتل کیس میں عدلیہ کے فیصلے سے مطمئن نہیں اور اپیل کے بارے میں قیادت ہی فیصلہ کرے گی، جبکہ پرویزمشرف نے ہی جائے وقوعہ پر شواہد کو مٹانے کا حکم دیا۔ نواز شریف کو اعلیٰ عدلیہ نے نااہل قرار دیا ہے اور اب ان کو رِویو پٹیشن کے فیصلے آنے تک انتظار کرنا چاہیے۔ نواز شریف کو عدلیہ مخالف تقاریر نہیں کرنی چاہیے، ایم کیو ایم پاکستان کو بانی متحدہ سے خطرہ ہے۔ دہشتگردی پوری قوم کا مسئلہ ہے اور اس کا نشانہ سب سے زیادہ پیپلزپارٹی کی قیادت اور ورکرز بنے ہیں، ہم دہشتگردوں کا مقابلہ کررہے ہیں اور پولیس اور رینجرز کے جوان اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کررہے ہیں جبکہ دہشتگردی کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے کے لیے ہمیں اس مائنڈ سیٹ کو ختم کرنا پڑیگا، مراد علی شاہ نے متنازعہ مردم شماری پر اے پی سی میں لائحہ عمل دینے کا اعلان بھی کر دیا۔ وہ پیر کو فریضہ حج کے بعد اپنے گاو¿ں واہڑ میں اپنے والد کے مزار پر فاتحہ خوانی کرنے کے بعد میڈیا اور سیہون شریف کے دورہ کے موقع پر گفتگو کر رہے تھے۔ انہوں نے کہاکہ کراچی ڈوب جانے کے اطلاعات صحیح نہیں اور کراچی میں 150 ملی میٹربارش رکارڈ کی گئی ہے۔