قائد اعظم اور علامہ اقبال کاپاکستان

04 فروری 2013


مکرمی!پاکستان وہ واحد ملک ہے جو ایک خاص نظریہ کی بنیاد پررب العالمین کی طرف سے اِک معجزے کے طور پر وجود میں آیا۔اس موقع پر مسلمانوں نے یہ عہد کیا :”اے اللہ! تو ہمیںایک آزادملک عطا فرما ‘ہم اس ملک میں تیرے نظام کا بول بالا کریں گے“۔ یہی وجہ تھی کہ اُس وقت یہ نعرہ بہت مشہور ہوا:”پاکستا ن کا مطلب کیا:لا الٰہ الا اللہ“....اس حوالے سے اگر علامہ محمد اقبال کا تصور ِپاکستان دیکھیں تو واضح ہوتا ہے کہ ان کے پیش نظرشروع دن سے ہی ایک اسلامی ریاست بنانا تھا ۔ 1930ءمیں انہوں نے پنجاب‘سرحد‘سندھ اور بلوچستان کو متحد کرکے اسلام کے مفاد میں ایک الگ مسلم ریاست بنانے کا مطالبہ کیا۔پھر علامہ اقبال نے محمد علی جناح (جو اُس وقت ہندوستان کی سیاست سے مایوس ہوکر انگلستان چلے گئے تھے)کو ہندوستان واپس آنے پر آمادہ کیااور اسلامی ریاست کے قیام کی بات کی۔1934ءمیں محمد علی جناح ہندوستان واپس آگئے اورمسلم لیگ کے تاحیات صدر بنادیے گئے۔ 1936ءمیں کانگریس کی فیصلہ کن جیت اور پھر ہندوو¿ں کے مسلمانوں سے ظالمانہ سلوک کے بعد محمد علی جناح نے 1937ءسے 1947ءتک مسلسل تکرار کے ساتھ ایک آزاد اسلامی مملکت کی بات کی اوریہ پر زور مطالبہ کیا کہ ہم اسلامی تہذیب اور اسلامی قوانین چاہتے ہیں جو ہندو قوانین سے یکسر الگ ہیں۔اس وقت انہوں نے ہندوو¿ں سے علیحدہ ایک اسلامی ریاست کے قیام کا مطالبہ شروع کردیا۔جب محمد علی جناح نے اسلامی ریاست کے قیام کا نعرہ لگایا تو ہندوستان کے مسلمانوں نے ان کی آواز پر لبیک کہااور مسلم لیگ ایک عوامی جماعت بن گئی۔یہ وہ دور تھاجب محمد علی جناح کو ”قائداعظم“کا لقب دیا گیا۔ بالآخرمسلمانوں کی بے پناہ قربانیوں کے بعد 14اگست 1947ءکو قائد اعظم ایک اسلامی ریاست کے قیام میں کامیاب ہوگئے اور پاکستان کے پہلے وزیر اعظم لیاقت علی خان نے قائد اعظم کے انتقال کے چند ماہ بعد دستور ساز اسمبلی سے ”قراردادِ مقاصد“منظور کراکے پاکستان میں نظامِ خلافت کی بنیاد قائم کردی جو اب ہمارے آئین کا آرٹیکل 2Aہے۔روزِ روشن کی طرح ان واضح حقائق کے باوجود ہمارے ہاں کا ایک سیکولر طبقہ تاریخ اوران حقائق کو مسخ کرکے یہ باور کرانا چاہتا ہے کہ قائداعظم خود بھی سیکولر تھے اور وہ ایک سیکولر ریاست کا قیام چاہتے تھے۔اس حوالے سے تمام محب وطن پاکستانیوںکو چاہیے کہ ایسے سازشی عناصر اور ان کے پروپیگنڈے سے دور رہیں اور پاکستان کو قائد اعظم محمد علی جناح اور علامہ محمد اقبال کا پاکستان بنانے میں اپنا کردار ضرور اداکریں۔(حافظ محمد زاہد لاہور)