ایلون مسک کی کمپنی انسانی دماغ میں چِپ لگانے کیلئے تیار

ایلون مسک نے ٹوئٹ کرتے ہوئے کہا کہ جلد ہی پہلی نیورالنک ڈیوائس ایک مریض میں نصب کی جائے گی، جس کے ذریعے بعد ازاں پورے جسم کی حرکت بحال کی جاسکے گی۔

طویل مدتی منصوبے کے تحت نیورالنک مصنوعی ذہانت کی طرف سے انسانیت کو درپیش خطرات میں کردار ادا کرے گی، اس کے ذریعے ہم انسانی دماغ کو مصنوعی ذہانت کے مقابلے میں بہتر بناسکیں گے۔

رواں برس مئی میں نیورالنک کو امریکا کی فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن نے دماغی چِپ کے انسانی ٹرائلز کی منظوری دی تھی۔ایلون مسک نے ٹوئٹ کرتے ہوئے کہا کہ جلد ہی پہلی نیورالنک ڈیوائس ایک مریض میں نصب کی جائے گی، جس کے ذریعے بعد ازاں پورے جسم کی حرکت بحال کی جاسکے گی۔

طویل مدتی منصوبے کے تحت نیورالنک مصنوعی ذہانت کی طرف سے انسانیت کو درپیش خطرات میں کردار ادا کرے گی، اس کے ذریعے ہم انسانی دماغ کو مصنوعی ذہانت کے مقابلے میں بہتر بناسکیں گے۔

رواں برس مئی میں نیورالنک کو امریکا کی فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن نے دماغی چِپ کے انسانی ٹرائلز کی منظوری دی تھی۔نیورالنک کا کہنا ہے کہ آر 1 روبوٹ کے ذریعے چِپ کو دماغ کے ایسے حصے میں نصب کیا جائے گا جہاں جسم کو حرکت دینے کی سوچ پیدا ہوتی ہے۔