ظفر علی راجاکہیں لوگوں کے گھر تھا رقص آتشکہیں جانوں پہ جانیں کھو رہی تھیںلہو کی سرخیاں ساری بھلا ...