'' تعلیم ہر بچے کا بنیادی حق ہے

'' تعلیم ہر بچے کا بنیادی حق ہے

وطن عزیز میں وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ شرح خواندگی میں اضافے کے بجائے کمی دیکھنے میں آ رہی ہے ۔بے شمار بچے ایسے ہیں جو تعلیم سے بے بہرہ ہی رہتے ہیں یعنی وہ سرے سے تعلیم حاصل ہی نہیں کر پاتے ۔اس کی کئی وجوہات ہیں ،جہاں ملک بھر کے سرکاری تعلیمی اداروں میں معیارتعلیم کا فقدان ہے وہیں نجی اسکولوں میں والدین اپنے بچوں کو پڑھانے کی سکت نہیں رکھتے کیونکہ ان کی فیسیں اور دیگر اخراجات آسمان سے باتیں کر رہے ہوتے ہیں ۔سرکاری اسکولوں میں غیر معیاری تعلیم کی وجہ سے کتنے ہی طلباء اپنے تعلیمی سلسلے کو ادھورا ہی چھوڑ دیتے ہیں اور پڑھنے کی عمر سے ہی کام کاج میں لگ جاتے ہیں ۔اس کی وجہ یہ ہے کہ سرکاری اسکولوں کے اساتذہ تعلیم جیسے مقدس پیشے سے خیانت کے مرتکب ہوتے ہیں اور علم کی روشنی پھیلانا انکا مطمع نظر نہیں ہوتا ۔ملک میں گھوسٹ تعلیمی اداروں اور اساتذہ کی بھرمار ہے ۔ایسے اساتذہ ہر ماہ باقاعدگی سے تنخواہیں وصول کرتے ہیں ۔حکمرانوں کی جانب سے برسوں سے معیار تعلیم بہتر بنانے کے بیانات دیئے جاتے اور شرح خواندگی میں اضافے کے اہداف بڑی شدو مد سے مقرر کئے جاتے رہے ہیں لیکن تاحال عملاً کچھ نہیں کیا گیا ۔حقیقتاً معیار تعلیم بہتر بنانے کے لئے توجہ دی ہی نہیں جاتی ۔حکومتوں کی عدم دلچسپی کی اس سے بڑی مثال اور کیا ہو گی کہ و فاقی بجٹ میں تعلیم کے لئے انتہائی کم حصہ مختص کیا جاتا ہے ۔ایسے دگرگوں حالات میں معیارتعلیم میں بہتری اور شرح خواندگی میں اضافے کی توقع رکھنا ہی عبث ہے ۔دوسری جانب وقتاً فوقتاً اطلاعات آتی رہتی ہیں کہ پانچ سال کے ہر بچے کو اسکول میں داخل کروانا لازم ہے ۔اس عمر کے بچے کو اسکول نہ بھیجنے والے والدین کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی ،لیکن اس حوالے سے کوئی بھی کارروائی عمل میں نہیں لائی جاتی ۔حالانکہ اس پر سختی سے عمل درآمد کو ممکن بنانا چاہئے ۔تعلیم پر ہر بچے کا حق ہے اور تعلیم کو مفت اور بہتر فراہم کرنا سرکار کی ذمہ داری ہے ۔شرح خواندگی کے حوالے سے ملک بھر میں موثر کاروائیاں کرنے کی اشد ضرورت ہے ۔سرکار اس ضمن میں سنجیدگی کا مظاہرہ کرے ۔ملک بھر میں والدین کو راغب کیا جائے کہ وہ اپنے بچوں کو لازمی تعلیم دلائیں ۔اگر وہ نہ مانیں تو ان کے خلاف سخت کاروائیاں کی جائیں ۔یقینا اس کے کافی مثبت نتا ئج برآمد ہوں گے ۔(حلیمہ عرفان ۔کراچی )