زائد فیسیں وصول کرنے پر 164 نجی سکولوں کو نوٹس جاری، 15 روز میں جواب طلب

لاہور (خبرنگار+سٹاف رپورٹر) پرائیویٹ سکولوں کی فیسوں کے حوالے سے جاری ہونے والے آرڈیننس پر عملدرآمد نہ کرنے والے نجی سکولوں کے خلاف کارروائی کا آغاز ہو گیا ہے۔ پہلے مرحلہ میں جن نجی سکولوں کے خلاف اس ضمن میں شکایات موصول ہو رہی ہیں ان 164 سکولوںکو زائد فیس وصول کرنے پر شوکاز نوٹس جاری کرکے ان سے 15 روز کے اندر اندر جواب طلب کر لیا گیا ہے۔ دوسرے مرحلہ میں نوٹسز جاری ہونے کے باوجود آرڈیننس پر عملدرآمد نہ کرنے والے سکولوں کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔ علاوہ ازیں ڈی سی او لاہور کیپٹن (ر) عثمان کی ہدایت پر ڈی او (سی) سندس ارشاد کی زیر صدارت رجسٹریشن اتھارٹی کا اجلاس بھی ہوا جس میں پرائیویٹ سکولز کے مالکان کو ہدایت کی گئی ہے کہ وہ حکومت پنجاب کے جاری کردہ آرڈیننس پر عمل درآمد کریں ورنہ ضلعی انتظامیہ قانون کے مطابق سخت کارروائی عمل میں لائے گی۔ علاوہ ازیں ڈی اوز اور سٹی ڈسٹرکٹ گورنمنٹ کے افسران پر مشتمل ٹیمیں بنا دی گئیں ہیں فیسیں کم نہ کرنے والے سکولز مالکان کے خلاف آئندہ چند دنوں میں جرمانوں کا سلسلہ شروع ہو جائے گا اور 20 سے 25 ہزار یومیہ کے حساب سے بھی جرمانے کئے جا سکتے ہیں۔ دوسری جانب پرائیویٹ سکول مالکان ایسوسی ایشن کا کہنا ہے کہ حکومت کا یہ اقدام ناانصافی پر مبنی ہے حکومت فیسوں میں کمی کے لئے پرائیویٹ سکولوں پر لگائے گئے ٹیکسز ختم کرے۔ مزید برآں صوبائی وزیر تعلیم رانا مشہود خاں نے کہا ہے کہ پرائیویٹ سکولوں کی فیسوں میں اضافے کے بارے میں آرڈیننس کے اجراءکے بعد اضافی فیسیں وصول کرنے والے نجی تعلیمی اداروں کے خلاف کارروائی تیزی کر دی گئی ہے اور والدین کی طرف سے مقررہ فیسوں سے زیادہ وصولی کی شکایات پر ایسے 164 پرائیویٹ سکولوں کو نوٹس بھیج دیئے گئے ہیں۔ فیسوں کو اپریل 2014 کی سطح پر واپس نہ لانے اور مذکورہ تاریخ کے بعد وصول شدہ اضافی فیسیں واپس نہ کرنے والے سکولوں کے خلاف سخت کارروائی کی جا رہی ہے۔

نجی سکول/نوٹس جاری