احتساب عدالت:اثاثہ جات ریفرنس میں پاناما جے آئی ٹی کے سربراہ 8 فروری کو اسحاق ڈار کے خلاف بطور گواہ طلب

31 جنوری 2018 (15:46)

اسلام آباد کی احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے سابق وزیر خزانہ سینیٹر محمد اسحاق ڈار کے خلاف نیب ریفرنس میں پاناما جے آئی ٹی کے سربراہ واجد ضیاء اور کیس کے تفتیشی افسر نادر عباس کو آٹھ فروری کو دوبارہ طلب کر لیا۔احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے اسحاق ڈار کے خلا ف آمدن سے زائد اثاثے بنانے کے حوالے سے دائر نیب ریفرنس پر سماعت کی۔ دوران سماعت دو گواہوں نے اپنے بیانات ریکارڈ کروا دیئے جبکہ سماعت کے اختتام پر احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے کہا کہ واجد ضیاء اور نادر عباس کو آئندہ سماعت پر عدالت میں پیش کیا جائے۔ اس پر نیب پراسیکیوٹر عمران شفیق نے عدالت سے استدعا کی کہ واجد ضیاء کی طلبی کے سمن جاری کئے جائیں۔ اس پر جج احتساب عدالت نے عمران شفیق سے مکالمہ کرتے ہوئے کہا کہ سمن کیوں جاری کریں وہ استغاثہ کے گواہ ہیں۔ آپ انہیں خود لے کر آئیں۔ عدالت واجد ضیاء کو طلب کر رہی ہے اگر آپ کے کہنے پر نہ آئے تو پھر انہیں عدالت طلبی کے سمن جاری کرے گی۔ عدالت نے کیس کی مزید سماعت8 فروری تک ملتوی کر دی۔