کبیر والا کی طالبہ کا اغوا و زیادتی، ملزموں کو گرفتار کیا جائے: سحرمقبول، بشریٰ

31 جنوری 2018

ملتان (لیڈی رپورٹر) کبیر والا میں سکول سے واپسی پر طالبہ ارم رانی کو ٹیچرز کے سامنے اغواء کر کے زیادتی کرنا دہشت گردی کے زمرے میں آتا ہے۔ محکمہ پولیس روائتی انداز میں تفتیش کر کے مجرموں کو ریلیف دینے کی مرتکب ہو رہی ہے۔ مجرموں کو فوری گرفتار کیا جائے اور مقدمہ میں دہشت گردی کی دفعات شامل کی جائیں۔ اس واقعہ کے بعد ہر صاحب اولاد خوفزدہ ہے۔ ان خیالات کا اظہار امجد بلوچ پروگرام اسپیشلسٹ ایس پی او نے آواز ڈسٹرکٹ فورم کے زیر اہتمام پرامن احتجاج سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ سحر مقبول، بشریٰ خاتون سیکرٹری ملتان سول سوسائٹی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مظلوم بچی کا تھانے میں بروقت مقدمہ درج کرنے سے کترانا اور عدالت کے کہنے پر مقدمہ درج ہونا ظلم کی انتہا ہے۔ جواد امین قریشی، عبدالمطب فرخ نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پولیس کرپشن میں بڑی طرح گھر چکی ہے جس کی وجہ سے غریب اور مظلوم کیلئے یہ خوف کی علامت ہے جبکہ مجرمان کھلے عام گھوم رہے ہیں۔ انہوں نے چیف جسٹس سے اپیل کی ہے کہ وہ معصوم طالبہ کے ساتھ ظلم کا نوٹس لے اور انہیں فوری انصاف فراہم کریں۔ بشریٰ بخش، چاندنی، سمیعہ کنول، الیاس پادری، یاذر خان کے علاوہ احتجاج میں مرد و خواتین کی کثیر تعداد میں شریک ہوئی اور مطالبہ کیا کہ اگر کبیر والا کی معصوم طالبہ ارم رانی کو انصاف نہ ملا تو ملتان سول سوسائٹی پنجاب بھر میں احتجاج کرے گی۔