طالبہ عاصمہ رانی کے قتل میں ملوث ملزم کی گرفتاری کیلئے 72 گھنٹوں کی ڈیڈ لائن

31 جنوری 2018

پشاور(بیورورپورٹ)پراونشل ڈاکٹرز ایسوسی ایشن یوتھ فورم نے خیبرپختونخوا حکومت کو کوہاٹ میں میڈیکل کالج کی طالبہ عاصمہ رانی کے قتل میں ملوث مرکزی ملزم کی گرفتاری کیلئے 72 گھنٹوں کی ڈیڈ لائن دیدی بصورت دیگر ملزم کی عدم گرفتاری پر صوبہ بھر کے تمام ہسپتالوں اور میڈیکل کالجز میں احتجاج کا سلسلہ شروع کردیا جائے گا۔ پشاور پریس کلب میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے فورم کے صدر حامد خان اور دیگر کا کہنا تھاکہ ڈاکٹر برادری عاصمہ کے قتل کی بھر پور مذمت کرتی ہے،عاصمہ کو با اثرملزمان نے گھر کے سامنے قتل کیاملزم با اثر ہے اس لئے واردات کے بعد با آسانی ملک سے فرار ہونے میں کامیاب ہو گیا۔ملزم کو گرفتار نہ کرنا خیبرپختونخوا پولیس کی ناکامی ہے۔انہوں نے کہا کہ ڈاکٹرز پہلے بھی مارے گئے مگر ملزمان گرفتار نہیں ہوئے،ڈاکٹر واجد علی کا قاتل ابھی تک گرفتار نہیں کیا گیا،ان کا کہنا تھا کہ جب تک ملزم گرفتار نہیں ہوتا ڈی پی او کوہاٹ اور دیگرمتعلقہ پولیس آفیسران کو معطل کر دیا جائے انہوں نے مطالبہ کیا کہ صوبائی حکومت کو 72 گھنٹوں میں عاصمہ کے قاتلوں کی گرفتاری کیلئے ڈیڈ لائن دیتے ہیں اگر 72 گھنٹوں میں ملزمان کو گرفتار نہ کیا گیا تو صوبہ بھر کے ہسپتالوں میں احتجاج کرتے ہوئے ایمرجنسی سروس کے علاوہ ہسپتالوں میں دیگر سروسز کو بند کردیں گے جبکہ صوبے کے تمام سرکاری و نجی میڈیکل کالجز میں بھی احتجاج کا سلسلہ شروع کیا جائیگا اورہمارا احتجاج ملزمان کی گرفتاری تک جاری رہے گا۔

ڈیڈ لائن