تمام عدالتوں میں میرے خلاف ہی مقدمے چل رہے ہیں: نوازشریف زرداری کی سینٹ انتخابات میں ہارس ٹریڈنگ کی سازش ناکام بنا دیں گے: مسلم لیگ ن

31 جنوری 2018

اسلام آباد (نامہ نگار‘نوائے وقت رپورٹ ‘ایجنسیاں) سابق وزیراعظم محمد نواز شریف نے کہا ہے کہ سپریم کورٹ سمیت تمام عدالتوں میں میرے خلاف ہی مقدمے چل رہے ہیں، مگر عوام جانتے ہیں کہ میرے خلاف کیسز چلانے کی وجہ کیا ہے۔ احتساب عدالت میں پیشی کے بعد میڈیا سے مختصر گفتگو کرتے ہوئے سابق وزیراعظم نے میڈیا نمائندگان کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ جاکر چیک کرلیں سپریم کورٹ سمیت آج ہر جگہ میرا ہی کیس چل رہا ہے۔ نیب کورٹ ہو، ہائی کورٹ یا سپریم کورٹ، ہر عدالت میں نواز شریف کے خلاف ہی مقدمہ چل رہا ہے۔ سابق وزیر اعظم نے صحافیوں سے کہا کہ میرے خلاف ہر عدالت میں مقدمے چلنے کی کیا وجہ ہوسکتی ہے اسے ڈھونڈنے کی کوشش کریں، بلکہ سب جانتے ہیں کہ یہ مقدمات کیوں چل رہے ہیں، وجہ سب کے سامنے ہے۔ نواز شریف نے کہا کہ کوئی بتاسکتا ہے کہ صرف میرے خلاف کیسز کیوں چل رہے ہیں، جس کا جواب میں خود ہی دیتا ہوں ۔ وجہ کیا ہے، وجہ یہ ہے کہ نوازشریف پر جو الزامات تھے وہ کافی کمزور تھے، الزامات بھی پرانے تھے، اب یہ لوگ نئے ثبوت ڈھونڈ رہے ہیں ۔ میڈیا سے مختصر گفتگو کے بعد نواز شریف پنجاب ہائوس روانہ ہوگئے۔ انہوں نے کہا کہ نیب کے الزامات وہی پرانے ہیں، ضمنی ریفرنس لانا ثبوت ہے کہ استغاثہ نے مان لیا کہ پہلا کیس کمزور تھا اور شہادت کافی نہیں تھی۔ علاوہ ازیں نواز شریف سے فنکشنل لیگ کے سربراہ صدرالدین راشدی نے ملاقات کی۔ ملک کی سیاسی صورتحال سمیت اہم امور پر تبادلہ خیال کیا۔ مزید برآں نواز شریف دو روزہ دورے پر کل جمعرات کو کراچی پہنچیںگے اور عوامی رابطہ مہم کو تیز کر یں گے، اس بات کا فیصلہ نوازشریف کی زیرصدارت اجلاس میں ہوا۔ اجلاس پنجاب ہائوس اسلام آباد ہوا جس میں مریم نواز، سینیٹر پرویز رشید ، وفاقی وزیر سینیٹر مشاہد اللہ خان ، آصف کرمانی اور دیگر رہنمائوں نے شرکت کی۔ کراچی میں قیام کے دوران نواز شریف مسلم لیگ ن کی صوبائی قیادت کے اجلاس کی صدارت کریں گے۔ سینیٹر مشاہد اللہ نے اجلاس کے بعد میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ اجلاس میں موجودہ سیاسی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ اجلاس میں بلوچستان کے معاملے پر بات چیت کی گئی، بلوچستان میں آصف زرداری کا کردار افسوسناک ہے، بلوچستان میں آصف زرداری نے جو کردار ادا کیا وہ جمہوریت کی خدمت نہیں۔ جمہوریت، اداروں کی مضبوطی کیلئے پیپلز پارٹی کی حکومت کے ساتھ تعاون کیا تھا۔ آصف زرداری بلوچستان کے لوگوں کو بکاؤ مال سمجھتے ہیں۔ گزشتہ حکومت کے 5سال پورا کرانے میں اس لئے مدد کی کہ جموریت مضبوط ہو۔ جو کچھ بلوچستان میں آصف زرداری نے کیا تمام لوگوں نے مذمت کی۔ ان کی ہارس ٹریڈنگ کی کوششیں ناکام بنا دیں گے۔ ذرائع کے مطابق اجلاس میں سینٹ انتخابات کیلئے حکمت عملی تشکیل دی گئی۔ اجلاس میں بلوچستان اسمبلی میں آصف زرداری کی مداخلت پر اظہار تشویش کیا گیا۔ اجلاس میں کہا گیا کہ جمہوریت مخالف ہتھکنڈوں سے جمہوریت کو نقصان پہنچے گا۔ مسلم لیگ ن نے صوبوں میں سینٹ انتخابات میں بہتر نتائج کیلئے کمیٹیاں بنا دیں۔ بلوچستان کی کمیٹی میں سردار یعقوب ناصر، عبدالقادر بلوچ، افضل مندوخیل، خیبر پی کے کمیٹی میں امیر مقام، سردار مہتاب عباسی اور عباس آفریدی شامل ہیں۔