سپریم کورٹ کی مہلت ختم، پولیس راؤ انوار کو گرفتار کرنے میں ناکام

31 جنوری 2018

کراچی (کرائم رپورٹر) نقیب اللہ قتل کیس میں نامزد معطل ایس ایس پی راؤ انوار کی گرفتاری کیلئے سپریم کورٹ کی تین روز کی مہلت ختم ہو گئی لیکن پولیس ملزم کو گرفتار نہ کر سکی۔ 13 جنوری کو کراچی کے علاقے شاہ لطیف ٹاؤن میں ایک پولیس مقابلے کے دوران نقیب اللہ محسود کو ہلاک کیا گیا جس کے بعد اس وقت ایس ایس پی ملیر کے عہدے پر تعینات راؤ انوار نے نقیب اللہ کے دہشت گرد ہونے کا دعویٰ کیا تھا۔ سپریم کورٹ نے آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ کو راؤ انوار کی گرفتاری کیلئے تین روز کی مہلت دی تھی جو ختم ہو چکی ہے۔ آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ نے راؤ انوار کی گرفتاری کیلئے گزشتہ دنوں حساس اداروں کو خط بھی لکھا اور ملزم کی گرفتاری کیلئے تکنیکی اور انٹیلی جنس معاونت کی درخواست کی لیکن ملزم اب تک گرفتار نہیں ہو سکا۔ ہفتے کے روز سپریم کورٹ میں پیشی کے دوران آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ نے بے بسی کا اظہار کرتے ہوئے کہا تھا کہ اگر انہیں پتہ ہوتا کہ راؤ انوار کہاں ہے تو پہلے ہی پکڑ کر لے آتے۔ پولیس کی جانب سے راؤ انوار اور جعلی پولیس مقابلے میں شامل اہلکاروں کے موبائل فون کے فورانزک تجزیے اور سی ڈی آر کئے گئے جس سے ثابت ہوا ہے کہ راؤ انوار مقابلے کے وقت وقوعہ پر موجود تھے اور تمام اہلکار و افسران ایک دوسرے سے لمحہ بہ لمحہ رابطے میں رہے۔

رائو انوار/ سپریم کورٹ مہلت ختم