حکومت اور اپوزیشن کی چپقلش سے عوام کا نقصان ہو رہا ہے

31 جنوری 2018

یزمان(خبر نگار) کاشتکاروں مزدوروں اور ضعیف العمر افراد نے ایک سروے میں کہا ہے کہ زرعی اجناس کی قیمتیں برائے نام ہونے اور روزمرہ اشیائے صرف کی گرانفروشی سے انکی کمر ٹوٹ کر رہ گئی ہے۔ ان خیالات کا اظہار 88 چوک کے محنت کشوں محمد نواز رکشہ ڈرائیور کاشف اور طاہر نے کرتے ہوئے کہا کہ حکمران گزشتہ دو سال سے اپنی کرسی بچانے اور اپوزیشن کرسی چھیننے کے در پے ہے جس کی وجہ سے آئے روز پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ کیا جا رہا ہے جس سے پہلے ہی محرومیوں تلے دبے کروڑوں افراد دربدر کی ٹھوکریں کھا رہے ہیں اور اب ان کی حالت قابل رحم ہے۔ انہوں نے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں کم کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ کاشتکاروں تنویر وڑائچ اور محمد صدیق نے کہا کہ وہ نہری پانی کی بوند بوند کو ترس رہے ہیں۔ نہریں گزشتہ ایک ماہ سے بند ہیں جس کی وجہ سے رواں خشک سالی ان کے ہائیڈروجن بم کے مترادف ہے لیکن حکمران اس سے بے خبر اپنی شاہ خرچیوں میں مگن ہیں۔