کمالیہ: مقررہ تاریخ سے قبل جانیوالی بارات 2 دن بعد خالی ہاتھ لوٹ آئی

31 دسمبر 2013

کمالیہ (نامہ نگار) مقررہ تاریخ سے ایک دن قبل بارات لے جانے کی بناءپر دونوں خاندانوں میں تنازعہ شدت اختیار کر گیا۔ لڑکی والوں کا رشتہ دےنے سے انکار، باراتیوں نے ایک رات گاﺅں کے قریب گراﺅنڈ میں گاڑیوں، کاروں اور مہمانوں سمیت ٹھٹھرتی سردی میں کھلے آسمان تلے رات گزاری۔ بارات دو دن بعد خالی ہاتھ گھر کو لوٹ آئی۔گذشتہ روز کمالیہ کے نواحی گاﺅں 739 گ ب کے دو بھٹہ مزدور بھائیوں محمد اسلم اور محمد اصغر کی شادی 29 دسمبر کو بارات کے لئے مقرر ہوئی تھی۔ لیکن وہ ایک دن قبل ہی 28 دسمبر کو بارات لے کر کمالیہ کے نواحی گاﺅں موضع عنایت شاہ پہنچ گئے۔ لڑکی والے سیخ پا ہو گئے اور بارات کو واپس جانے کو کہا اور مقررہ تاریخ کو آنے کو کہا جبکہ دولہا والوں نے خالی ہاتھ واپس جانے اور گاﺅں میں خفگی سے خوف سے وہیں رکنا مناسب سمجھا اور موضع عنایت شاہ کے قریب ایک گراﺅنڈ میں ہی کھلے آسمان تلے ٹھٹھرتی سردی میں رکے رہے اور کھانے وغیرہ کا اہتمام بھی کیا۔ جب اگلے روز مقررہ تاریخ کو بارات لے کر لڑکی والوں کے گھر پہنچے تو لڑکی والوں نے یہ کہہ کر بارات دوبارہ واپس لوٹا دی آپ لوگوں نے گاﺅں کے پاس رات ٹھہر کر علاقے میں ہماری بے عزتی کروائی ہے۔ جس پر بارات دو دن بعد دلہن کے بغیر ہی اپنے گاﺅں واپس لوٹ آئی۔ تمام تحفے تحائف بھی واپس کیے گئے۔
بارات واپس