پریشاں کاروبارِ آشنائی

31 دسمبر 2013

پریشاں کاروبارِ آشنائی
پریشاں تر مِری رنگیں نوائی!
کبھی میں ڈھونڈتا ہوں لذتِ وصل
خوش آتا ہے کبھی سوزِ جدائی!
(بالِ جبریل)