زلزلہ متاثرین کی عیادت: لواحقین کے گو بلاول گو اور گو عمران گو کے نعرے، پولیس کا لاٹھی چارج

30 اکتوبر 2015

پشاور (ایجنسیاں) پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ پہلی بار پشاور آیا ہوں، ہم سب کو زلزے کے متاثرین کی امداد کرنی چاہئے۔ مشکل گھڑی میں پیپلز پارٹی متاثرین زلزلہ کے دکھ درد میں برابر کی شریک ہے متاثرین کو مصیبت کی گھڑی میں تنہا نہیں چھوڑیں گے حکومت متاثرین کے لئے ریلیف سرگرمیاں تیز کرے ۔ زلزلہ زدگان کی بحالی کے لئے ٹائم فریم دیا جائے۔ وہ پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری ہمایوں خان کی رہائش گاہ پر میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کررہے تھے۔ بلاول نے کہا کہ ملک میں جہاں کہیں سانحہ رونما ہوا پاکستان پیپلز پارٹی نے ہراول دستے کا کردار ادا کیا۔ بلاول نے پارٹی کے سینئر قائدین اور پی ایس ایف کے کارکنوں سے ملاقات کی اور ان کے گلے شکوے بھی سنے، ان کا کہنا تھا کہا کہ ہم یہاں زلزلہ متاثرین کے ساتھہ ہمدری کرنے آئے ہیں، یہ سنگین نوعیت کا زلزلہ تھا۔ آپ لوگوں میں ہمت تھی کہ برداشت کیا۔ وفاقی حکومت کی جانب سے متاثرین کے لئے جس امداد کا اعلان کیا گیا ہے وہ کچھ بھی نہیں ہے مشکل گھڑی میں پیپلز پارٹی متاثرین زلزلہ کے دکھ درد میں برابر کی شریک ہے۔ حکومت متاثرین کے لئے ریلیف سرگرمیاں تیز کرے ۔ اس سے قبل بلاول بھٹو زرداری نے زلزلے کے زخمیوں کی عیادت کے لئے لیڈی ریڈنگ ہسپتال کا دورہ کیا، مریضوں کی عیادت کی اور ان کی خیریت دریافت کی۔ لیڈی ریڈنگ ہسپتال میں سکیورٹی کے سخت انتظامت کئے گئے۔ ہسپتال کے محتلف راستوں کو خاردار تاریں لگا کر بند کر دیا گیا تھا۔ دورے کے دوران لوگوں کو ہسپتال داخل ہونے سے روک دیا گیا۔ اس موقع پر لواحقین گو بلاول گو، گو عمران گو کے نعرے لگاتے رہے۔ بلاول بھٹو زرداری کی پشاور کے لیڈی ریڈنگ ہسپتال آمد پر مریضوں اور تیمارداروں نے راستے سیل کیے جانے پر شدید احتجاج کیا۔ بلاول بھٹو زرداری لیڈی ریڈنگ ہسپتال میں زیر علاج زخمیوں کی تیمار داری کیلئے پشاور پہنچے ان کے ساتھ وزیراعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ، آصفہ بھٹو زرداری اور شیری رحمن بھی موجود تھیں۔اس موقع پر سکیورٹی کے سخت ترین انتظامات کیے گئے 500 سے زائد پولیس اہلکاروں کو لیڈی ریڈنگ ہسپتال کے اطراف میں تعینات کیا گیا۔ ہسپتال کے ایڈمنسٹریشن بلاک کے تمام راستے سیل کر دئیے گئے تھے، جس کے باعث ہسپتال میں زیر علاج مریضوں اور تیمار داروں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔ لواحقین نے مشکلات کے باعث احتجاج شروع کر دیا۔پیپلزپارٹی کے جیالوں نے بھی جوابی نعروں میں زندہ ہے بھٹو زندہ ہے کے نعرے لگائے جس سے صورتحال کشیدہ ہوگئی۔ پولیس نے وارڈز میں داخلے کی کوشش کرنے والے مظاہرین پر لاٹھی چارج کیا۔ بلاول بھٹو زرداری کی جانب سے زلزلہ متاثرین کی امداد کیلئے امدادی سامان جس میں خیمے، کمبل اور سردی سے جان بچانے والی اشیا شامل ہیں، دو ٹرکوں کے ذریعے بلاول چورنگی کراچی سے روانہ کردیا گیا۔