انٹرنیشنل کرکٹ کی بحالی، کوششوں کے مثبت نتائج آرہے ہیں: نجم سیٹھی

30 مارچ 2018

لاہور(اسپورٹس رپورٹر) پاکستان اور ویسٹ انڈیز کی ٹیموں کے درمیان تین ٹی ٹونٹی انٹرنیشنل میچز کی سیریز کے لوگو کی تقریب رونمائی کر دی گئی۔ قذافی اسٹیڈیم لاہور میں منعقد ہونے والی تقریب کے مہمان خصوصی پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیئرمین نجم سیٹھی تھے۔اس موقع پر سپانسرز کے نمائندے صہیب فخر، فہد محمود، محمد ذاکر اور احمد علی بھی موجود تھے جنہوں نے انٹرنیشنل کرکٹ کی بحالی پر چیرمین نجم سیٹھی کی کاوشوں کی تعریف کی ۔ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے چیئرمین پی سی بی نجم سیٹھی کا کہنا تھا کہ لوگ پی ایس ایل فائنل کراچی میں کرانے بارے شک و شبہات میں مبتلا تھے جبکہ اب وہ ویسٹ انڈیز سیریز کے بارے باتیں کر رہے تھے مگر اب آئی سی سی نے اپنا ریفری ڈیوڈ بھون بھیج دیا جبکہ سپانسرز بھی سامنے آ گئے ہیں لہذا یقین کر لیں کہ سیریز ہو گی ۔ نجم سیٹھی نے کہا کہ خالی دعووں پر یقین نہیں رکھتے بلکہ جو کہتے ہیں کرکے دکھاتے ہیں ۔ ان کا کہنا تھا کہ پی سی بی نے ملک میں انٹرنیشنل کرکٹ کی بحالی کے لئے جو کوششیں کی تھیں ان کے مثبت نتائج سامنے آرہے ہیں خوشی ہے کہ انٹرنیشنل کرکٹ کے دروازے اب کھل چکے ہیں ۔سری لنکا کے بعد اب ویسٹ انڈیز بھی کھیلنے آ رہی ہے۔ انہوں نے سپانسرز کا شکریہ ادا کیا اور کہا کہ پی ایس ایل دنیا کا بڑا برانڈ بن چکا ہے جس کے لئے اب سپانسرز کافی آ رہے ہیں ، نجم سیٹھی نے کہا کہ چند ماہ میں پی ایس ایل کے لئے تین سالہ رائٹس کیلئے نیلامی کریں گے۔ چیئرمین پی سی بی نے کہا کہ بعض قانونی پیچیدگیوں کی وجہ سے پی ایس ایل کا الگ بورڈ نہیں بنا سکے مگرمستقبل میں پی ایس ایل کی بڑھتی ہو ئی ذمہ داریوں اور میگا برانڈ کے پیش نظر اب کوشش کرر ہے ہیں کہ کوئی قانونی طریقہ ڈھونڈھ لیا جائے تاکہ پی سی بی اور فرنچائز کے حقوق کا خیال رکھا جا سکے۔ ایک سوال کے جواب میں پی سی بی چیئرمین نجم سیٹھی نے کہا کہ بھارت کے ساتھ کرکٹ سیریز کے تنازعہ پر آئی سی سی میں معاملات چل رہے ہیں ۔ ہمارے وکلا نے آج بھی آئی سی سکو کچھ دستاوایزات بھیجی ہیں مگر مجبوری ہے اس بارے میڈیا میں نہیں بتا سکتے۔ ان کا کہنا تھا کہ آئندہ چند مہینوں میں آئی سی سی میں ک گئی اپیل کا نتیجہ سامنے آ جائے گا۔امریکہ میں کھیلی جانے والی ٹرائی سیریز بارے بات کرتے ہوئے کہا کہ ستمبر میں امریکہ میں مجوزہ ٹرائی سیریز بارے ویسٹ انڈیز کے سا تھ ایم او یو سائن کرر کھا ہے مگر ابھی تک اس بارے معاملات طے کر رہے ہیں۔