یہودی آبادکاروں کا سینی گال کے وزیر خارجہ کے ساتھ قبلہ اول پر دھاوا، بیحرمتی کا ارتکاب

30 مارچ 2018

مقبوضہ بیت المقدس(اے این این) یہودی آباد کاروں کے ہمراہ اسرائیلی پولیس کی فول پروف سکیورٹی میں سینی گال کے وزیرخارجہ بھی اعلیٰ اختیاراتی وفد کے ہمراہ مسجد اقصی میں داخل ہوئے اور مقدس مقام کی بے حرمتی کاارتکاب کیا۔ فلسطینی میڈیا رپورٹس کے مطابق گزشتہ روز دسیوں یہودی آباد کاروںکے ہمراہ سینی گال کے وزیرخارجہ نے مسجد اقصیٰ میں گھس کر مذہبی رسومات اداکیں۔ اس موقع پر یہودی آباد کاروں نے اسرائیلی پرچموں والے کپڑے پہن رکھے تھے۔ یہودی آباد کار اور سینی گال وفد مسجد اقصیٰ کے مراکشی دروازے سے قبلہ اول میں داخل ہوئے۔ اس موقع پر اسرائیلی پولیس کی بھاری نفری اور متعدد صہیونی فوٹو جرنلسٹ بھی ان کے ہمراہ تھے۔ یہودی آباد کاروں نے سینی گال وزیرخارجہ کے ساتھ مسجد اقصیٰ میں یادگاری تصاویر بھی بنوائیں۔ اس موقع پر قبلہ اول کے محافظوں اور یہودی آبادکاروں کے درمیان کشیدگی بھی پیدا ہوئی تاہم صہیونی پولیس نے یہودیوں کو سکیورٹی فراہم کررکھی تھی۔ادھر اسرائیلی ذرائع ابلاغ کے مطابق ایسٹر تہوار کے موقع پر اسرائیلی پولیس کو مسجد اقصی پر چھاپوں کے لیے خصوصی تربیت فراہم کی گئی ہے۔میڈیا رپورٹس کے مطابق بیت المقدس کی موجودہ کشیدہ صورتحال کے تناظرمیں اسرائیلی پولیس کودن بھر خصوصی تربیت دی گئی ہے۔ ایسٹر تہوار کے موقع پر صہیونی فوج نے پرانے بیت المقدس کو مکمل طورپر سیل کردیا ہے۔پولیس کو فلسطینیوں کی چھان بین، ان کی تلاشی، فلسطینیوں کی طرف سے ممکنہ پرتشدد حملوں کی روک تھام اور احتجاج کو روکنے کیلئے تمام وسائل کے ساتھ عسکری تربیت بھی دی گئی ہے۔ اسرائیلی انسپکٹر جنرل پولیس رونی الشیخ نے ایک بیان میں کہا ہے کہ یوم الارض کے موقع پر فلسطینیوں کی طرف سے احتجاج پر خوف زدہ ہونے کی ضرورت نہیں۔ پولیس القدس میں سکیورٹی کے امور کو بہتر انداز میںسنبھالے گی اور کسی بھی ناخوشگوار واقعے سے نمٹنے کی کوشش کرے۔

EXIT کی تلاش

خدا کو جان دینی ہے۔ جھوٹ لکھنے سے خوف آتا ہے۔ برملا یہ اعتراف کرنے میں لہٰذا ...