سندھ یونیورسٹیز اینڈ انسٹی ٹیوشنز لاء ترمیمی بل 2018ء حکومت سے جواب طلب

30 مارچ 2018

کراچی(وقائع نگار ) سندھ صوبائی اسمبلی یں عجلت میں منظور کردہ سندھ یونیورسٹیز اینڈ انسٹی ٹیوشنز لاز ترمیمی بل 2018کے خلاف پاسبان کی آئینی درخواست پر سندھ ہائی کورٹ نے وزیر اعلیٰ ،چیف سیکریٹری اور اسپیکر سندھ اسمبلی کو تفصیلی جواب جمع کرانے کی ہدایت کی ہے اور 19اپریل تک مہلت دی ہے ۔ سندھ ہائیکورٹ کے جسٹس عقیل احمد عباسی پر مشتمل دورکنی بینچ نے جمعرات کو پاسبان کی آئینی درخواست کی سماعت کی ۔ اس موقع پر پاسبان پاکستان کے صدر الطاف شکور اور وکیل عرفان عزیز بھی موجود تھے ۔ معزز عدالت میں ایڈوکیٹ جنرل سندھ اور ڈپٹی اٹارنی جنرل سندھ کی جانب سے پیش ہونے والے وکلاء نے پاسبان کی درخواست پر اعتراض اٹھایا کہ ابھی اسمبلی یں ایکٹ نہیں بنا ابھی یہ پروپوزڈبل ہے ۔ پاسبان کی جانب سے عرفان عزیز ایڈوکیٹ نے عدالت کو بتایا کہ یہ پروپوزڈبل نہیں بلکہ ڈرافٹٹڈ بل ہے اور خلاف ضابطہ منظور کیا گیا ہے ۔عدالت عالیہ سندھ نے کیس کی سماعت 19اپریل تک ملتوی کرتے ہوئے ایڈوکیٹ جنرل سندھ اور ڈپٹی ایڈوکیٹ جنرل سندھ کو ہدایت جاری کی کہ وہ اس معاملے پر تفصیلی جواب جمع کرائیں تاکہ موازنہ کیا جاسکے ۔