خطے میں کسی کی بالادستی قبول نہیں‘ طاقت کا توازن اور استحکام چاہتے ہیں : جنرل کیانی

30 جون 2013
خطے میں کسی کی بالادستی قبول نہیں‘ طاقت کا توازن اور استحکام چاہتے ہیں : جنرل کیانی

اسلام آباد (سپیشل رپورٹ/ آئی این پی/ اے پی اے) چیف آف آرمی سٹاف جنرل اشفاق پرویز کیانی نے کہا ہے کہ سری لنکا کی فوج عسکریت پسندی کے خطرہ سے نہ صرف اپنے ملک کو نجات دلانے میں کامیاب ہوئی بلکہ اس کے بعد کے حالات سے نمٹنے میں بھی کامیابی حاصل کی۔ چیف آف آرمی سٹاف سری لنکا کی ملٹری اکیڈمی کی پاسنگ آﺅٹ پریڈ سے خطاب کر رہے تھے۔ آرمی چیف نے اپنے خطاب میں کہا کہ تین دہائیوں تک عسکریت پسندی کے خلاف جدوجہد میں پاکستان نے سری لنکا کی قوم اور فوج کا سا تھ دیا اور پاکستان نے دہشت گردی اور عسکریت پسندی کے خلاف جدوجہد میں سری لنکا کی مادی اور اخلاقی اعتبار سے مدد کی۔ پاکستان نے سری لنکا کا ایک سچا اور مخلص دوست ہونے کا ثبوت دیا۔ پاکستان اور سری لنکا اور دونوں ملکوں کی افواج میں اعتماد کا رشتہ اسی وجہ سے قائم ہے۔ پاکستان اور سری لنکا کی افواج میں اعلیٰ درجہ کا باہمی اعتماد اور مثبت جذبات پائے جاتے ہیں۔ دونوں ممالک کی افواج نے مختلف چیلنجوں سے نمٹنے کیلئے ایک دوسرے سے تعاون کیا اور دونوں ملکوں نے اس کے قیام اور خطے کے امن و استحکام کیلئے بھی مل کر کام کیا۔ آرمی چیف نے توقع ظاہر کی تعاون اور اعتماد کا یہ رشتہ مستقبل میں مزید مضبوط ہو گا۔ پاکستان آرمی سری لنکا کی فوج کو اعلیٰ درجہ کی پیشہ وارانہ مہارت کے حصول میں معاونت فراہم کرتی رہے گی۔ پاکستان اور سری لنکا امن اور استحکام کیلئے تعاون کرتے رہیں گے لیکن وہ بالادستی کے خلاف رہیں گے۔ جنرل کیانی نے توقع ظاہر کی کہ سری لنکا کے جن افسروں نے اپنی تربیت مکمل کی ہے وہ سری لنکا کی فوج کے مسقبل کی قیادت ہے، وہ اپنی فوج کی شاندار روایت کو برقرار رکھیں گے۔ پاکستان آرمی کے سربراہ نے اعزازات حاصل کرنے والے سری لنکا کے فوج کے افسران اور اہل خانہ کو مبارکباد دی۔ جنرل اشفاق پرویز کیانی نے کہا کہ خطے میں کسی کی بالادستی قبول نہیں، خطے میں طاقت کا توازن اور استحکام چاہتے ہیں، پاکستان اور سری لنکا اندرونی مسائل کے باوجود امن پسند ملک ہیں، پاکستان ہمیشہ سری لنکن قوم اور افواج کے ساتھ کھڑا رہا۔ سری لنکن فوج نے مشکل حالات میں عسکریت پسندی اور تشدد پر قابو پایا اور تنازعہ کے بعد امن و استحکام میں بھی کامیابی حاصل کی۔ انہوں نے کہا کہ سری لنکن فوجی اکیڈمی دنیا کے بہترین اداروں سے ایک ہے اور اس سے خطاب کرنا میرے لئے اعزاز کی بات ہے۔ انہوں نے کہا کہ کوئی غلط فہمی میں نہ رہے، پاکستان کے بغیر افغانستان میں امن قائم نہیں ہو سکتا۔ اس حوالے سے ہمارے کردار سے سب واقف ہیں اور ہم آئندہ بھی کردار ادا کرتے رہیں گے۔ پاکستان کی قربانیاں کسی سے ڈھکی چھپی نہیں ہیں۔ 

آئین سے زیادتی

چلو ایک دن آئین سے سنگین زیادتی کے ملزم کو بھی چار بار نہیں تو ایک بار سزائے ...