ایک ہی خاندان کے 6 افراد گیسٹرو میں مبتلا‘ تحصیل ہسپتال میاں چنوں میں ادویات نایاب

30 جون 2013
ایک ہی خاندان کے 6 افراد گیسٹرو میں مبتلا‘ تحصیل ہسپتال میاں چنوں میں ادویات نایاب

 ملتان+میاں چنوں (وقائع نگار خصوصی+نامہ نگار) سرکاری ہسپتالوں میں گیسٹررو انٹرائٹس اور ہیٹ سٹروک سے متاثرہ مریضوں کی آمد کا سلسلہ جاری ہے۔ گزشتہ روز بھی نشتر ہسپتال‘ چلڈرن کمپلیکس اور سول ہسپتال میں گیسٹرو انٹرانئٹس کے 147 جبکہ ہیٹ سٹروک کے پندرہ مریضوں کو لایاگیا ہے جن میں سچے 63 مریضوں کو داخل کرکے ان کا علاج جاری ہے جبکہ دیگرمریضوں کو ادویات تجویز کرنے کے بعد گھر بھیج دیا گیا ہے۔میاں چنوں سے نامہ نگار کے مطابق میاںچنوںکے نواحی گاﺅں 92پندرہ ایل میں گیسٹرو کی وباءپھیلنے سے ایک ہی خاندان کے 6افراد گیسٹرو کاشکار ہوگئے ۔جنہیںفوری تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتال منتقل کر دیا گیا ہے ،جہاں مریضوں کو معمولی طبی امداد گئی، پھر ڈاکٹرز اور نرسیں غائب ہوگئیں، ڈاکٹروں کے مطابق ہسپتال میں گیسٹرو کے مریضوں کےلئے ادویات کئی مہینوں سے ختم ہو چکی ہیں ۔ہسپتال میں ایک خاتون اور ایک بچی کی حالت تشویش ناک ہے،گیسٹرو کے مریض کوکہنا ہے کہ لواحقین اپنی جیب سے ڈرپ اور دیگر ادویات بازار سے خود خرید کر لاتے ہیں، ڈاکٹروں کا رویہ بھی ٹھیک نہیں، اعلیٰ حکام سے درخواست ہے کہ تحصیل ہیڈکوارٹر ہسپتال میاں چنوںکی انتظامیہ کے خلاف کاروائی کی جائے۔گیسٹرو مرض کا شکار ہونیوالوں میں غفاراں بی بی زوجہ عبدالغفار، منصب علی ولد عبدالغفار،افشاں بی بی،کشور بی بی،مقدس بی بی دختران عبدالغفار شامل ہیں۔

روحانی شادی....

شادی کام ہی روحانی ہے لیکن چھپن چھپائی نے اسے بدنامی بنا دیا ہے۔ مرد جب چاہے ...