مغربی ملکوں کی پالیسیاں عسکریت پسندی کے لئے ایندھن ہیں: ہیومن رائٹس واچ

30 جنوری 2015
مغربی ملکوں کی پالیسیاں عسکریت پسندی کے لئے ایندھن ہیں: ہیومن رائٹس واچ

 اسلام آباد (آن لائن) ہیومن رائٹس واچ نے مغربی ممالک کی پالیسیوں کو عسکریب پسندی کے لیے ایندھن قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں میں امریکا سمیت مغربی طاقتیں بھی معصوم نہیں ہیں۔ بہت سے معاملات میں ان کے غلط رویے بھی عسکریت پسندی میں اضافے کا سبب بن رہے ہیں۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق ہیومن رائٹس واچ کی سالانہ رپورٹ منظر عام پر لاتے ہوئے اس امریکی نگران ادارے کے سربراہ کینتھ روتھ کا کہنا تھاآج دنیا میں پیدا شدہ بحرانوں یا ان کی سنگینی میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کا انتہائی اہم کردار ہے۔ یوں لگتا ہے آج بہت سی حکومتوں نے اپنے سکیورٹی خطرات کے پیش نظر کیے جانے والے اقدامات کو انسانی حقوق کی نسبت مقدم رکھا ہوا ہے۔ 660 صفحات پر مبنی یہ رپورٹ پیش کرتے ہوئے کینتھ روتھ کا کہنا تھا، ” مشکل حالات میں وہ (حکمران) یہ بحث کرتے ہوئے دکھائی دیتے ہیں کہ انسانی حقوق کو پش پشت رکھا جا سکتا ہے۔“ ان کا کہنا تھا کہ انسانی حقوق سیاسی حقوق کا لازمی جزو ہیں اور ان کو پس پشت ڈالنا نہ صرف غلط ہے بلکہ اس کے نتائج بھی منفی ثابت ہوتے ہیں۔ ا±ن کہنا تھا ’اسلامک اسٹیٹ‘ کی مقبولیت کے پیچھے 2003ءمیں عراق پر کیے جانے والے امریکی حملے کا بھی ہاتھ ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ امریکا کی طرف سے ابو غریب جیل اور گوانتانامو میں واضح طور پر انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں کی گئی تھیں اور وہاں سکیورٹی خلا بھی عراق جنگ کی وجہ سے پیدا ہوا۔