عوامی فلاح و بہبود اور ترقیاتی منصوبوں کی جلد تکمیل کیلئے نظام میں تبدیلیاں ناگزیر ہیں : شہبازشریف

29 مارچ 2010
لاہور (خبرنگار خصوصی/ ثناءنیوز) وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف نے کہا ہے کہ عوام کی فلاح و بہبود اور ترقیاتی منصوبوں کی جلد تکمیل کےلئے موجودہ نظام میں تبدیلیاں ناگزیر ہیں، ترقیاتی منصوبوں میں دس سال بعد دوبارہ کرپشن فری کلچر کو فروغ دیا گیا ہے اور تمام وسائل عوام کی بہتری پر ہی خرچ کئے جارہے ہیں۔ ترقیاتی منصوبوں میں فنڈز کے خوردبرد اور وسائل کی لوٹ مار کو ہمیشہ ہمیشہ کےلئے دفن کر دیا گیا ہے۔ بے زمین کاشتکاروں اور زرعی گریجوایٹس میں سرکاری اراضی تقسیم کی جائےگی۔ مسلم لیگ ن نے عوام کی خدمت کو اپنا اوڑھنا بچھونا بنایا ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے گذشتہ روز ترقیاتی منصوبوں کے حوالے سے منعقدہ اعلیٰ اجلاس اور مسلم لیگ ن کے کارکنوں سے خطاب کرتے ہوئے کیا جبکہ وزیراعلیٰ نے اجلاس میں عوام کی سہولت کےلئے گنجان آباد علاقوں میں مزید پانچ پارکنگ پلازوں کی تعمیر، لاہور رنگ روڈ پیکج 6 اور 7 پر ہارٹیکلچر کے کام کو جلد مکمل کرنے، ستوکتلہ ڈرین اور بھٹہ چوک کی بہتری کےلئے فوری اقدامات کرنے کی ہدایت کی جبکہ شہباز شریف نے سیکرٹری لوکل گورنمنٹ پنجاب انوار احمد کی والدہ کے انتقال پر اپنے تعزیتی پیغام میں گہرے دکھ اور افسوس کا اظہار کرتے ہوئے مرحومہ کے درجات کی بلندی کےلئے دعا کی ہے۔ مزیدبراں وزیراعلیٰ نے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کہا کہ صوبے میں ترقیاتی منصوبوں کی بروقت و شفاف تکمیل کو یقینی بنانے کےلئے جامع پروگرام پر عمل پیرا ہیں اور تمام بڑے منصوبوں کی مانیٹرنگ کا مﺅثر نظام وضع کیا گیا ہے۔ لاہور کے گیٹ وے لاہور رنگ روڈ پیکج 6 اور 7 ہارٹیکلچر، لینڈ اسکیپنگ اور فواروں کا پلان مرتب کر کے جلد کام شروع کیا جائے اور شجرکاری کے پروان کےلئے ڈرپ سسٹم بھی متعارف کرایا جائے۔ ستوکتلہ ڈرین پراجیکٹ کی بہترین سے اہالیان لاہور کو نہ صرف ایک اور کینال میسر آسکتی ہے بلکہ آلودہ پانی کو صاف کر کے آبپاشی کےلئے بھی استعمال میں لایا جاسکتا ہے۔ اس موقع پر کمشنر لاہور‘ ڈائریکٹر جنرل ایل ڈی اے اور کنسلٹنٹ احمد مختار نے ترقیاتی منصوبوں کے حوالے سے تفصیلی بریفنگ دی۔ کارکنوں سے خطاب میں شہباز شریف نے کہا کہ پنجاب حکومت کم آمدنی والے افراد کو چھت کی فراہمی کےلئے کم لاگت ہاﺅسنگ سکیمیں شروع کی جارہی ہیں اور دیہی علاقوں میں بے گھر افراد کو اپنے گھروں کی تعمیر کےلئے پانچ مرلہ سکیم کا بھی آغاز کیا جارہا ہے جبکہ زراعت کی ترقی اور کسانوں کی خوشحالی کےلئے انقلابی منصوبے شروع کر رکھے ہیں جن کے حوصلہ افزاءنتائج برآمد ہو رہے ہیں۔ گذشتہ سال دو ارب روپے کی سبسڈی سے چھوٹے کاشتکاروں کو شفاف طریقے سے 10 ہزار ٹریکٹر تقسیم کئے رواں سال بھی رعایتی نرخوں پر 10 ہزار ٹریکٹر تقسیم کئے گئے۔ صوبے میں زراعت کے فروغ کےلئے حکومت کے اقدامات سے نہ صرف کاشتکار خوشحال ہوگا بلکہ صوبے میں سبز انقلاب برپا ہو گا۔