جمعیت علمائے اسلام نے حکومت سے علیحدگی پر سنجیدگی سے غور شروع کر دیا

29 مارچ 2010
اسلام آباد (ثناءنےوز ) حکومتی اتحادی جمعیت علماءاسلام (ف) نے حکومت سے علیحدگی پر سنجیدگی سے غور شروع کردیا ۔ حتمی حکمت عملی طے کرنے کے لیے آئندہ ماہ اپریل کے دوسرے ہفتہ میں جے یو آئی(ف) کی مرکزی مجلس عاملہ اور صوبائی امراءو جنرل سیکرٹریز کا مشترکہ اجلاس طلب کرلیا گیا جو 11 اپریل کو ہوگا حکومت سے علیحدگی کے لیے ابتدائی طورپر سینٹ ، قومی اسمبلی میں جے یو آئی(ف) کی پارلیمانی پارٹی سے مشاورت کرلی گئی ہے ارکان نے حکومت کے حوالے سے سخت موقف کا اظہار کیا ۔ ذرائع کے مطابق ارکانکو حکومت سے عدم تعاون کی ہدایت کردی گئی ہے۔ پارلیمانی پارٹی نے یہ اختیار مولانا فضل الرحمان کو دے دیا ہے۔ پارلیمانی پارٹی حکومت سے علیحدگی پر آمادہ ہو گئی ہے۔ عین اس موقع پر جبکہ 18 ویں ترمیم کی منظوری کے لیے پارلیمنٹ میں فیصلہ کن مرحلہ آنے والا ہے ۔ اتحادی جماعت کی جانب سے حکومت سے علیحدگی کے عندیہ سے اس کے حکومت کے ساتھ معاملات کو شدید دھچکا لگ سکتا ہے۔