سیالکوٹ باﺅنڈری پر بھارت کی بلا اشتعال فائرنگ‘ گولہ باری‘ پاکستان کا شدید احتجاج

29 مارچ 2010
سیالکوٹ / راولپنڈی (نامہ نگار+ مانیٹرنگ نیوز) بھارتی سکیورٹی فورسز نے سیالکوٹ ورکنگ باﺅنڈری کے پسرور چاروا سیکٹر پر بلااشتعال فائرنگ کی اور گولے بھی برسائے‘ پاکستانی سکیورٹی فورسز نے فلیگ میٹنگ میں بھارتی بارڈر فورس کی جانب سے سیزفائر معاہدے کی خلاف ورزی پر شدید احتجاج کیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق سیالکوٹ ورکنگ باﺅنڈری پر ہفتے اور اتوار کی درمیانی شب بھارتی سکیورٹی فورسز نے مقبوضہ جموں و کشمیر کے علاقہ میں اپنی ٹینٹ پوسن پوسٹ سے بلااشتعال فائرنگ کی اور گولے بھی برسائے گئے جو ورکنگ باﺅنڈری لائن کے قریب کھیتوں میں گرے‘ کسی جانی نقصان کی اطلاع نہیں ملی ہے۔ بھارتی گولہ باری اور فائرنگ کی آوازیں پاکستان کے سرحدی دیہاتوں میں بھی سنی گئیں اور سو ئے ہوئے لوگ اٹھ کر بیٹھ گئے‘ فائرنگ اور گولہ باری کا سلسلہ بیس منٹ تک جاری رہا جس کے بعد چناب رینجرز نے بھی جوابی کارروائی کی تو بھارتی سکیورٹی فورسز کی طرف سے بلااشتعال فائرنگ اور گولہ باری کا سلسلہ رک گیا۔ بھارتی سکیورٹی فورسز کی طرف سے تازہ ترین فائرنگ اور گولہ باری میں بھاری ہتھیار استعمال کئے گئے۔ آئی ایس پی آر کے مطابق پاکستان کے مطالبے پر چناب رینجرز اور بی ایس ایف کے اعلیٰ حکام کی فلیگ میٹنگ سیالکوٹ ورکنگ باﺅنڈری پر ہوئی۔ جس میں گذشتہ رات بی ایس ایف کی جانب سے سیز فائر معاہدے کی خلاف ورزی پر بھارت سے شدید احتجاج کیا گیا۔ پاکستانی سکیورٹی فورسز نے بی ایس ایف کا یہ الزام مسترد کر دیا کہ پاکستان سے کسی شخص نے ورکنگ باﺅنڈری پار کرنے کی کوشش کی تھی۔ بی ایس ایف کو بتایا کہ فائرنگ کی آوازیں ورکنگ باﺅنڈری کے قریب بھارتی حدود سے سنی گئیں۔ آئی ایس پی آر کے مطابق ماضی میں بھی بھارتی سکیورٹی اہل کار کئی مرتبہ ورکنگ باﺅنڈری پر بلااشتعال فائرنگ کر چکے ہیں۔ فلیگ میٹنگ میں بھارتی سکیورٹی فورسز کی طرف سے بلاجواز فائرنگ نہ کرنے کی یقین دہانی بھی کروائی گئی۔ واضح رہے کہ 9مارچ سے بھارتی فائرنگ کا یہ چھٹا واقعہ ہے۔

آئین سے زیادتی

چلو ایک دن آئین سے سنگین زیادتی کے ملزم کو بھی چار بار نہیں تو ایک بار سزائے ...