بھارت امریکی دباﺅ پر مذاکرات کی میز پر آیا تھا: سردار محمد جاوید

29 جولائی 2010 (18:46)
برسلز (عظیم ڈار) تھنک ٹینک انسٹی ٹیوٹ آف سپیس اینڈ ڈویلپمنٹ یورپ کے سربراہ سردار جاوید سرور نے کہا ہے بھارت کو امریکی دباﺅ نے مذاکرات کی میز پر لا بٹھایا تھا کیونکہ امریکہ پاکستانی افواج کو مشرقی سرحدوں سے ہٹا کر مغربی سرحدوں پر لانا چاہتا ہے۔ افغانستان میں بھی طالبان کے ہاتھوں اتحادی افواج نقصان پر نقصان اُٹھا رہی ہیں۔ موجودہ صورت حال میں امریکی اور یورپی ممالک یہ سوچ رہے ہیں کہ اگر مسئلہ کشمیر کا کوئی ڈھیلا ڈھالا حل نکل آئے تو اُن کی مشکلات افغانستان میں کم ہو سکتی ہیں۔ مگر بھارت کے وزیر خارجہ نے مذاکرات میں مولا جٹ کا کردار ادا کر کے نہ صرف پاکستان کو مایوس کیا بلکہ امریکہ اور عالمی قوتوں کو بھی پریشان کر دیا ہے۔ پاکستان کے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے مذاکرات کے دوران بہت ہی تحمل مزاجی کا ثبوت دیا۔ مگر جب بھارتی وزیر خارجہ کو دہلی سے فون آنا شروع ہوئے اُس وقت اُنہوں نے اپنا رویہ جارحانہ کر دیا اور پریس کانفرنس کے دوران یہ تک کہہ دیا کہ بھارت جامع مذاکرات کے لئے تیار نہیں ہے بلکہ مذاکرات برائے مذاکرات کی پرانی پالیسی اپنائے ہوئے ہے۔

EXIT کی تلاش

خدا کو جان دینی ہے۔ جھوٹ لکھنے سے خوف آتا ہے۔ برملا یہ اعتراف کرنے میں لہٰذا ...