نیشنل ایکشن پلان: سیاسی تلخیوں کو رکاوٹ نہیں بننے دیا جائیگا, وزیر اعظم کی زیر صدارت اجلاس میں فیصلہ

29 جنوری 2016 (18:31)

 وزیر اعظم نواز شریف کو اعلیٰ سطحی اجلاس میں چارسدہ میں باچا خان یونیورسٹی میں دہشتگردی کے واقعہ کے بارے میں تفصیلی بریفنگ دی گئی اور سانحہ کے پیشرفت کے بارے میں آگاہ کیا گیا۔ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ نیشنل ایکشن پلان پر عملدرآمد میں سیاسی تلخیوں کو رکاوٹ نہیں بننے دیا جائیگا۔ وزیر اعظم نے حکومت کے عزم کا اعادہ کیا کہ دہشتگردی کیخلاف جنگ جاری رکھی جائیگی اس وقت تک جنگ لڑی جائیگی جب تک ملک کی سرزمین سے آخری دہشتگرد کا خاتمہ نہیں ہو جاتا۔ اجلاس میں چوہدری نثار، خواجہ آصف، اسحاق ڈار ،پروےز رشےد ، وزیر اعظم کے مشیر خارجہ سرتاج عزیز اور دوسرے اعلیٰ حکام نے شرکت کی۔ وزیر اعظم نے کہا کہ مادر وطن سے دہشتگردی کا خاتمہ ریاست عوام اور حکومت کا اجتماعی عزم ہے۔ انہوں نے کہا کہ درسگاہوں میں اس طرح بے گناہ بچوں کے قتل کرنے کے سنگین فعل میں ملوث دہشتگردوں اور ان کے سہولت کاروں کو انصاف کے کٹہرے میں لایا جائیگا۔ انہوں نے کہا کہ آپریشن ضرب عضب کی وجہ سے دہشتگردوں کی کمر توڑ دی ہے۔ دہشتگرد اب بوکھلاہٹ کا شکار ہیں آسان اہداف کو نشانہ بنا رہے ہیں تاہم ان کے مذموم ایجنڈے کو پورا نہیں ہونے دیا جائیگا۔ اجلاس میں چار سدہ آپریشن کے بارے میں بھی بات چیت کرتے ہوئے اس بات پر اتفاق رائے پایا گیا کہ آپریشن کے مثبت نتائج نکلے ہیں آپریشن کو منطقی نتیجہ تک جاری رکھا جائیگا۔ اجلاس میں کراچی آپریشن اور آپریشن ضرب عضب میں قانون نافذ کرنے والے اداروں کی قربانیوں اور مربوط کوششوں کی تعریف کی گئی۔ وزیراعظم نے اجلاس کے شرکاءکو اپنے حالیہ دورہ سعودی عرب، ایران اور ڈیووس کے بارے میں بتایا اور کہا کہ پاکستان کا بیرون ملک امیج بہتر ہوا ہےجو حکومتی ٹیم کی ٹھوس کوششوں کا ثمر ہے۔ دنیا میں کاروباری افراد اور ادارے پاکستان کو مثبت طور پر دیکھ رہے ہیں جس کے لئے حکومت کی معاشی ٹیم تعریف کے مستحق ہے۔ وزیراعظم نے کہا کہ ملک درست سمت میں ہے۔ دہشت گردی کا خاتمہ اور پرامن پاکستان حکومت کی اولین ترجیح ہے۔ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں کامیابی اور معاشی استحکام کے حصول نے عوام کے اندر ایک نئی امید پیدا کردی ہے۔ ذرائع کے مطابق اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ امن و امان اور عوام کے جان و مال کا تحفظ پہلی ترجیح ہے۔ کراچی کا امن مکمل بحال کریں گے۔ دہشتگردی کے خلاف پرعزم ہو کر لڑیں گے۔ کسی صورت کوتاہی برداشت نہیں کی جائے گی۔ اجلاس میں ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل کی جانب سے کرپشن میں کمی کی رپورٹ پر اطمینان کا اظہار کیا گیا۔ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ امن مکمل بحال کریں گے۔ دہشت گردوں کو اپنی نئی نسل کو یرغمال بنانے کی کسی صورت اجازت نہیں دی جا سکتی۔ تمام اداروں میں شفافیت اور کارکردگی کی بہتری کے اقدامات تیز کریں گے۔