حکومت درخواست دے‘ ناموس رسالت قانون پر نظرثانی کرینگے : چیئرمین اسلامی نظریہ کونسل

29 جنوری 2016
حکومت درخواست دے‘ ناموس رسالت قانون پر نظرثانی کرینگے : چیئرمین اسلامی نظریہ کونسل

اسلام آباد (نوائے وقت رپورٹ+ رائٹرز) چیئرمین اسلامی نظریہ کونسل محمد خان شیرانی نے کہا ہے ناموس رسالت قوانین پر علماءکرام میں اختلاف رائے ہے حکومت کو درخواست بھیجنی اور اپنے م¶قف کی دلیل دینی ہو گی۔ کونسل سنجیدگی سے غور کرے گی۔ تجاویز دی جائیں گی، غیر ملکی خبر ایجنسی سے گفتگو کرتے انہوں نے کہا کہ ناموس رسالت قانون پر بحث کیلئے حکومت کو کونسل کو باضابط درخواست دینا ہو گی۔ مولانا محمد خان شیرانی نے کہا ہے کہ وہ ناموس رسالت کے قانون پر نظرثانی کرنے کیلئے تیار ہیں۔ انہوں نے کہا اسلامی نظریہ کونسل اپنی تجاویز دیگی آیا اس قانون کو اسی حالت میں برقرار رہنا چاہئے، مزید سخت کرنا چاہئے یا اس میں نرمی لانی چاہئے، اس حوالے سے محمد خان شیرانی نے اپنی ذاتی رائے کا اظہار نہیں کیا۔ پاکستان میں اس قانون کے تحت سزائے موت دی جا سکتی ہے تاہم اب تک اس قانون کے تحت کسی کو سزائے موت دی نہیں گئی۔ اسلامی نظریہ کونسل کے ارکان نے اس ماہ 8، 9 سال کی عمر میں لڑکیوں کی شادی کرنے والوں کو سخت سزا دینے کے بل کی مخالفت کی تھی۔ اس حوالے سے بات کرتے ہوئے شیرانی نے کہا اسلامی نظریہ کونسل کا قانونی حق ہے کہ وہ ملکی قوانین کو دیکھے کہ وہ اسلام کے مطابق ہیں یا نہیں لیکن ان سفارشات پر عمل قانونی طور پر لازم نہیں۔ انہوں نے کہا کوئی بھی بچہ بالغ ہونے پر علیحدگی کا اختیار رکھتا ہے۔ شیرانی نے کہا صدر کے قاتل کو معاف کرنے کے اختیار سمیت ملک میں کئی قوانین اسلام سے مطابقت نہیں رکھتے۔ انہوں نے کہا مذہبی اقلیتوں پر تشدد سمیت کئی مسائل کی وجہ حکومت کی مناسب طور پر اسلام پر عمل میں ناکامی ہے۔