ترقی میں رکاوٹ نہیں صرف آئینی حق مانگ رہے ہیں: قائم علی شاہ

29 جنوری 2016

کراچی (آئی این پی+ آن لائن) وزیراعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ نے کہا ہے کہ سندھ حکومت نے پورٹ قاسم اتھارٹی کو بندر گاہ کی سرگرمیوں کے لئے زمین دی تھی مگر پورٹ قاسم اتھارٹی زمین کو کمرشل کرنا چاہتی ہے، جبکہ سمندر سے ری کلیم کی گئی زمین آئینی طور پر سندھ کی ملکیت ہے لہذا وفاق ری کلیم کی گئی زمین پر سندھ کا حق تسلیم کرے تو منصوبوں کے لئے پارٹنر شپ کے لئے تیار ہیں۔ وہ جمعرات کو وزیراعلیٰ ہائوس میں پاک چین اقتصادی راہداری کی پارلیمانی قائمہ کمیٹی کے اراکین سے ملاقات کے دوران گفتگوکررہے تھے جنہوں نے قائمہ کمیٹی کے چیئرمین سینیٹر مشاہد حسین سید کی سربراہی میں ان سے ملاقات کی۔ وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ کیٹی بندر کو انرجی پارک ڈیکلئیر کیا جائے کیونکہ وہاں پر پانی بھی ہے اور یہ ایک قدرتی بندرگاہ ہے اور ہم کیٹی بندر تا تھر ریلوے لائن بچھانے کے لئے بھی تیار ہیں تاکہ تھر سے کوئلے کی نقل و حمل آسانی سے ہوسکے۔ مشاہد حسین سید نے وزیراعلیٰ سندھ کے موقف کی تائید کرتے ہوئے اس بات کا یقین دلایا کہ وہ اس سلسلے میں وزیراعظم سے بات کریں گے۔ انہوں نے وزیراعلیٰ سندھ اور سینئر صوبائی وزیر خزانہ مراد علی شاہ کو اسلام آباد آنے کی دعوت دیتے ہوئے کہا اگر وہ اسلام آباد آجائیں تو ملکر ان تمام مسائل کا حل نکالا جاسکتا ہے اور ان کا تدراک ہو سکتا ہے۔ دریں اثناء قائم علی شاہ نے گزشتہ روز گورنر ہاؤس میں گورنر سندھ ڈاکٹر عشرت العباد خان سے ملاقات کی ملاقات میں صوبہ اور شہر میں قیام امن میں سکیورٹی فورسز کے اقدامات کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے اس عزم کا اظہار کیا گیا کہ صوبے میں آخری دہشتگرد تک آپریشن جاری رہے گا۔