جب بندہ وزیر اعظم بن جاتا ہے تو کسی کی بات نہیں سنتا: غوث علی شاہ

28 ستمبر 2014

کراچی(آئی این پی)مسلم لیگ (ن)  سے مستعفی رہنما سید غوث علی شاہ نے بھی دھرنوں کی حمایت میں بات کرتے ہوئے کہا ہے کہ جب بندہ وزیر اعظم بن جاتا ہے تو کسی کی بات نہیں سنتا ‘ ہر اس احتجاج کی حمایت کرتا ہوں جو غلط اقدام کے خلاف کیا جائے جہاں چوٹ لگتی ہے آوازوہیں سے آتی ہے ‘ دھرنے ڈیڑھ ماہ سے جاری ہیں کوئی مسئلہ ہے تو عوام گھروں سے نکلے ہیں‘اگر قانون پر عمل درآمد نہیں ہوگا تو پھر دھرنے ہی ہوں گے۔سندھ میں انتخابات میں 90فیصد سے زائد دھاندلی ہوئی ہے۔  وہ ہفتہ کو الیکشن ٹربیونل کے باہر میڈیا سے بات چیت کر رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ اگر نواز شریف کسی کا مشورہ مان لیتے تو آج ایسا نہ ہوتا۔ ڈیڑھ ماہ سے دھرنا جاری ہے جو معمولی بات نہیں ہے۔ میں ہر اس دھرنے کی حمایت کرتا ہوں جو کسی غلط اقدام کے خلاف کیا جائے۔غوث علی شاہ نے  کہا کہ نواز شریف حکومت کی کارکردگی بہتر نہیں‘ پارٹی قیادت سے اختلافات ضرور ہیں مگر ساری زندگی مسلم لیگی رہا ہوں‘ پیپلز پارٹی سمیت کسی بھی دوسری سیاسی جماعت میں جانے کا سوچ بھی نہیں سکتا۔مشہور روحانی بزرگ حافظ غلام محمد سوہو کی رہائش گاہ پر ستیانوں شریف میں صحافیوں سے باتیں کرتے ہوئے  انہوں نے  کہا کہ سندھ میں پیپلز پارٹی کی حکومت کی کارکردگی انتہائی مایوس کن ہے۔کرپشن عروج پر ہے، سندھ کے لوگ مفلسی کی زندگی گزار نے پر مجبور ہیں۔ انہوں نے کہا کہ سندھ میں رہنے والے سب سندھی ہیں اور ہم دھرتی کو ماں سمجھتے ہیں اور ماں کے کبھی بھی ٹکڑے نہیں ہوتے۔ ایم کیو ایم کے سر براہ کو ایسا مطالبہ نہیں کرنا چاہئے جس سے اس امن کی دھرتی پر  بد امنی پیدا ہو۔