وزیراعظم کو جنرل اسمبلی میں بھارتی آبی جارحیت کا معاملہ بھی اٹھانا چاہئے تھا: حافظ سعید

28 ستمبر 2014

لاہور، گوجرانوالہ (سپیشل رپورٹر/ نمائندہ خصوصی) امیر جماعۃ الدعوۃ پاکستان پروفیسر حافظ محمد سعید نے کہا ہے کہ وزیراعظم نوازشریف کی طرف سے جنرل اسمبلی میں مسئلہ کشمیر اٹھانا قوم کے جذبات کی ترجمانی ہے۔ مظلوم کشمیریوں کو انکا حق خودارادیت فراہم کرنے کی باتیں خوش آئند ہیں۔ پوری قوم انکی تائید کرتی ہے، اس سے کشمیریوں کو حوصلہ ملے گا۔ وہ مرکز القادسیہ چوبرجی میں جماعۃ الدعوۃ لاہور کے زیراہتمام ایک تقریب سے خطاب کر رہے تھے۔ اس موقع پر فلاح انسانیت فائونڈیشن کے چیئرمین حافظ عبدالرئوف، مولانا محمد ادریس فاروقی و دیگر نے بھی خطاب کیا۔ جماعۃ الدعوۃ کے سربراہ حافظ محمد سعید نے کہا کہ جنوبی ایشیا میں امن کی بربادی کا ذمہ دار بھارت ہے۔ اسکی آبی دہشت گردی سے صرف پاکستان ہی نہیں مقبوضہ کشمیر کے عوام بھی بری طرح متاثر ہورہے ہیں۔ بھارت سرکار کشمیر میں سیلابی پانیوں میں ڈوبنے والوں کی کوئی مدد نہیں کررہی۔ کشمیری مسلمان انتہائی کسمپرسی میں امداد کے منتظر ہیں۔ حکومت اس مسئلہ پر اپنا کردار ادا کرے اور بیرونی دنیا کے ذریعے بھارت پر دبائو بڑھایا جائے کہ وہ عالمی اداروں اور ممالک کو مقبوضہ کشمیر میں سیلاب سے متاثرہ افراد کی مدد کی اجازت دے۔ انہوں نے کہا کہ وزیراعظم کو انڈیا کی آبی دہشت گردی جس کی وجہ سے ہم پچھلے پانچ برسوں سے مسلسل سیلابوں کی تباہی بھگت رہے ہیں اس معاملہ پر بھی بات کر کے پوری دنیا کو آگاہ کرنا چاہئے تھا۔ انڈیا کی آبی دہشت گردی کو روکا جائے۔ حافظ محمد سعید نے کہا کہ جماعۃ الدعوۃ عیدالاضحی پر تمام متاثرہ علاقوں میں جانور قربان کرے گی۔ لاکھوں متاثرین میں قربانی کا گوشت تقسیم کیا جائے گا اور اجتماعی دسترخوان لگائے جائیں گے۔ فلاح انسانیت فائونڈیشن پاکستان کے چیئرمین حافظ عبدالرئوف نے امدادی سرگرمیوں سے متعلق تفصیلی بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ 25 ہزار سے زائد افراد کو ریسکیو کیا گیا۔ لاکھوں افراد کو تیار کھانا اور طبی سہولیات فراہم کی گئی ہیں۔ گوجرانوالہ میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے امیر جماعۃ الدعوۃ پروفیسرحافظ محمد سعید نے کہا کہ انڈیا کبھی پاکستان کا دوست نہیں ہوسکتا اس کے واٹر بم سے بچنا ہے تو حکومت ‘ فوج اورعوام کو ایک پیج پرجمع ہونا ہوگا ‘حالیہ منصوعی سیلاب قدرتی آفت نہیں پاکستانی معیشت تباہ کرنے کی بھارتی منصوبہ بندی ہے، جس کواقوام عالم کے سامنے لانے اوراپنا مقدمہ بہترانداز میں پیش کرنے کی ضرورت ہے۔ امیر جماعۃ الدعوۃ کا کہناتھاکہ 9/11کے بعد پاکستان تنائوکا شکار تھا جبکہ انڈیا نے اس صورتحال کا بھرپور فائدہ اٹھاتے ہوئے نہ صرف سندھ طاس معاہدے کی خلاف ورزی کی بلکہ اس نے درجنوں ڈیم بھی تعمیر کئے اوراب انڈیا اس پوزیشن میں ہے کہ وہ صرف اپنے ڈیموںمیں جمع پانی چھوڑ کر پاکستان کوتباہی سے دوچار کرسکتا ہے۔ حافظ محمدسعید نے کہا کہ وزیراعظم کو اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں بھارتی آبی جارحیت پربھی آواز اٹھانی چاہئے تھی۔ انہوں نے کہا یہ وقت دھرنوں میںکھیل تماشہ کانہیں حکومت ‘ فوج‘ عوام اوردھرنے والے سیلاب متاثرین کی آبادکاری کویقینی بنائیں۔