ہم نے پاکستان کیلئے قربانیاں دی ہیں

28 ستمبر 2014
ہم نے پاکستان کیلئے قربانیاں دی ہیں

مکرمی! میں نے پاکستان بننے سے پہلے طالب علمی کے دوران 1940ءمیں قرار داد پاکستان منظوری اور پنجاب حکومت کے منظور کردہ لینڈ ریکٹ جسے ساہوکاروں نے کالا بل اور کسانوں نے سنہری بل کا نام دیا پھر بھی خوشیاں منائیں تھی۔ اختیارات ”زمینداروں‘’ ملاپ “ میں مسلم لیگ اور کانگریس کے اکابرین کے بیانات پر جوش آتا تھا۔ 1945ءمیں الیکشن کمیشن میں عارضی ملازمت کی۔ الیکشن 1946ءاور پنجاب حکومت کے خلاف ایجی ٹیشن میں ہماری جدو جہد کا قائداعظم نے بھی اعتراف کیا تھا۔ 14 اگست 1947ءاعلان آزادی پر خوشیاں منائیں۔ اس کے بعد روزی کی خاطر محکمہ نہر سے منسلک رہا اور 1980ءمیں قبل از ریٹائر ہو کر گریجوٹی جی پی فنڈ سے بچونکے تعلیمی اخرات پورے کئے۔ دوسری طرف آزادی کے بعد 1948ءمیں آئین مذقور ہوا اور جمہوری حکومت قائم ہوئی۔ جنرل ایوب خان نے مارشل لا سے 1958ءمیں ختم کر کے بائین منظور کی۔ پھر بعد میں مادر ملت کے خلاف سول انتظامیہ کے ذریعہ دھاندلی کر کے الیکشن جیت کر نام نہاد جمہوریت کی بنیاد رکھی۔ جو آخر کار عوامی دباﺅ پر نہ صرف ختم ہوئی بلکہ ملک دولخت ہوا۔ اس کے بعد تمام حکومتوں نے وہی طرز عمل اپنا کر حکومت کی ۔ اور خاتمہ بھی عوامی دباﺅ یا موت کی شکل میں ہوا۔ (دلاور حسین، ضلع سیالکوٹ)

آئین سے زیادتی

چلو ایک دن آئین سے سنگین زیادتی کے ملزم کو بھی چار بار نہیں تو ایک بار سزائے ...