جمہوریت کی بحالی کیلئے نوابزادہ نصراللہ خان کی خدمات کبھی بھلائی نہیں جا سکتیں

28 ستمبر 2014
جمہوریت کی بحالی کیلئے نوابزادہ نصراللہ خان کی خدمات کبھی بھلائی نہیں جا سکتیں

لاہور (خبر نگار) نوابزادہ نصراللہ خان لیڈروں کے لیڈر تھے۔ جمہوریت کی بحالی اور ملک کو آمروں سے نجات دلانے کیلئے ان کی خدمات کبھی بھلائی نہیں جا سکیں گی۔ ان خیالات کا اظہار نوابزادہ نصراللہ خان کی برسی پر ان کی یاد میں ہونے والی تعزیتی ریفرنس سے خطاب کرنے والے مقررین نے کیا۔ تعزیتی ریفرنس سے سید منظور علی گیلانی‘ نواز گوندل‘ سیف اللہ سیف‘ رانا نذر الرحمن‘ سید نوبہار شاہ‘ مخدوم زریاب یوسف ہاشمی‘ رانا عبدالرشید‘ جوزف فرانسس‘ مارٹن جاوید مائیکل نے خطاب کیا۔ ریفرنس کا اہتمام پاکستان کرسچین نیشنل پارٹی نے کیا۔ چیئرمین پاکستان عوامی محاذ و پاکستان استقلال پارٹی سید منظور علی گیلانی نے کہا کہ نصراللہ خان سے بہت کچھ سیکھا۔ وہ واقعی بابائے جمہوریت تھے۔ ان میں برداشت کا مادہ بہت زیادہ تھا۔ مخالف کی بات بھی خندہ پیشانی سے سنتے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں آج جلسہ‘ جلوس‘ دھرنے‘ ریلی کی جو آزادی میسر ہے وہ نوابزادہ نصراللہ خان کی جدوجہد کی وجہ سے ہے۔ آج اسلام آباد میں جو زبان استعمال ہو رہی ہے وہ سیاسی ہی ہے۔ نواز گوندل نے کہا کہ جمہوریت آئین کی بالادستی‘ قانون کی حکمرانی اور جمہوری اقدار کو فروغ دینے کا نام ہے۔ آزادی صحافت کے بغیر جمہوری معاشرے کا تصور نہیں کیا جا سکتا۔