پادری کی نوکری کا جھانسہ دیکر یتیم لڑکی سے زیادتی ہائیکورٹ کا نوٹس، ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج گوجرانوالہ سے رپورٹ طلب

28 نومبر 2013

لاہور (وقائع نگار خصوصی) لاہور ہائی کورٹ نے ایمن آباد میں عیسائی پادری کی جانب سے نوکری کا جھانسہ دے کر یتیم لڑکی کے ساتھ بد اخلاقی کرنے کے واقعہ کا نوٹس لیتے ہوئے ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج گوجرانوالہ کووقوعہ کی غیر جانبدار اور شفاف کاروائی کرنے اور پولیس کی جانب سے اٹھائے گئے اقدامات کی رپورٹ پیش کرنے کی ہدایات جاری کر دی ہیں۔ تفصیلات کے مطابق ایمن آباد کی رہائشی 20 سالہ عیسائی لڑکی کا والد کچھ عرصہ قبل وفات پا گیا۔ گھریلو حالات خراب ہونے کی وجہ سے لڑکی نوکری کے حصول کےلئے علاقہ کے ایک پادری شمشاد کے چنگل میں پھنس گئی۔ ملزم لڑکی کو نوکری کا لالچ دے کر اس کے ساتھ نہ صرف بد اخلاقی کرتا رہا بلکہ بلیک میل کرنے اور منہ بند رکھنے کےلئے موبائل کے ذریعے برہنہ تصاویر اور وڈیو فلمیں بھی بناتا رہا۔ تھانہ ایمن آباد میں درخواست دےدی۔ پولیس نے درخواست پر مقدمہ درج کرتے ہوئے ملزم پادری شمشاد کو گرفتار کر کے تفتیش شروع کر دی ہے۔