سپریم کورٹ بار ہاؤسنگ سوسائٹی کی تعمیر سے متعلق توہین عدالت درخواست کی سماعت

27 اکتوبر 2016

اسلام آباد (نمائندہ نوائے وقت) سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن ہاؤسنگ سوسائٹی کی تعمیر کے حوالے سے توہین عدالت کی درخواست کی سماعت میں عدالت نے بار ایسوسی ایشن کو رقم جمع کرانے جبکہ محکمہ لینڈ ایکوزیشن کو دو دن میں نوٹیفیکیشن جاری کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے کیس کی مزید سماعت جمعہ تک ملتوی کردی ہے۔ چیف جسٹس انور ظہیر جمالی کی سربراہی میں جسٹس امیر حانی مسلم اور جسٹس شیخ عظمت سعید پر مشتمل تین رکنی بنچ نے توہین عدالت کیس کی سماعت کی تو لینڈ ایکوزیشن کے وکیل نے کہا کہ انہیں اراضی کی رقم نہیں ملی، رقم کے بغیر فیڈرل گورنمنٹ ایمپلائز ہائوسنگ فیڈریشن کس طرح اراضی کی منتقلی اور قبضہ دے دے۔ سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن کے وکیل عبدالرحمن صدیقی نے موقف اختیار کیا کہ رقم ٹریثری اکائونٹ میں پڑی ہے مگر لینڈ ایکوزیشن والے رقم لینے اور این او سی جاری کرنے سے انکاری ہیں عدالتی حکم کی خلاف ورزی پر توہین عدالت کی درخواست دائر کی گئی ہے سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن ہائوسنگ سوسائٹی ، کامسٹس کے سامنے چک شہزاد اسلام آباد میں واقع چار ہزار ایک سو کنال زمین کے حصول کیلئے پانچ سو کروڑ روپے جمع کرانے کو تیار ہیں،جسٹس عظمت سعید نے وکلاء کی سرزنش کرتے ہوئے کہا کہ یہ کیا ہورہا ہے ایک فریق کہہ رہا رقم نہیں دے رہے دوسرا فریق کہہ رہا رقم جمع کرانا چاہتے ہیں کیا عدالت اتنی اتنی سی باتوں کے بھی فیصلے کرے؟ باہمی مل کر معاملہ حل کیوں نہیں کیا جارہا ؟بار ایسوسی ایشن کے وکیل نے عدالت کو یقین دہانی کروائی کہ ہم دو دن میں پیسے جمع کرا دیں گے جس پر فاضل عدالت نے فریقین کو ہدایت کی کہ دو دن میں پیسے جمع کراکر زمین منتقلی کا نوٹیفکیشن جاری کیا جائے اور رپورٹ جمعہ کو عدالت میں پیش کی جائے۔