تلاش

27 اکتوبر 2016

جس طرح فلسفے کا مقصد علم کو حاصل کرنا ہے اسی طرح دعا بھی حصولِ علم کا ایک ذریعہ ہے۔ فلسفہ حقیقت کی تلاش میں نرم رفتار ہوتا ہے اس کے برعکس دعا تیز فراحی اختیار کرکے حقیقت مطلقہ تک پہنچنا چاہتی ہے تاکہ وہ شعوری طور پر اپنی زندگی میں شریک ہو سکے۔
(علامہ اقبال کے خطبہ ’’تصورِ خدا اور دعا‘‘ کا مفہوم سے اقتباس)

آئین سے زیادتی

چلو ایک دن آئین سے سنگین زیادتی کے ملزم کو بھی چار بار نہیں تو ایک بار سزائے ...

تلاش گمشدہ

ہما رے معاشرے سے ضمیر،اخلا ق، اخلاص ، عزت، پیا ر اوراحترام سب گُم ہو گئے ہیں ...

تلاش ورثاء

لاہور (پ ر)تھانہ سول لائن کو ایک 30سال کے شخص کی نعش ملی ہے جسے ریسکیو 1122 نے ...