سی ڈی اے میں جائیداد کی ٹرانسفر رئیل اسٹیٹ ایجنسٹس کی تصدیق ٹرانسفر نہیں ہوسکے گی

27 اکتوبر 2016

اسلام آباد( وقائع نگار) میئر اسلام آباد و چیئرمین سی ڈی اے شیخ انصرعزیز نے وفاقی ترقیاتی ادارے میں لینڈ و اسٹیٹ کے حوالے سے نئی اصلاحات کی اصولی طورپر منظوری دے دی ہے ۔ سی ڈی اے میں کوئی بھی جائیداد رئیل اسٹیٹ ایجنسٹس کی تصدیق کے بغیر ٹرانسفر نہیں ہوسکے گی ڈیلرز سی ڈی اے کے ساتھ رجسٹرڈ ہونگے فیملی ٹرانسفر کے کیسوں میں بی سی ایس اور ریونیو کے این او سیز ختم کردئیے گئے ہیں جبکہ این ڈی سی اور دیگراین او سی سرٹییفکیٹس کی مدت تین ماہ سے بڑھا کر چھ ما ہ کردی گئی ہے چیئرمین نے دوماہ سے بند متاثرین کے پلاٹوں کی الاٹمنٹ پر غیر اعلانیہ پابندی ختم کرکے الاٹمنٹ کے لیے نئے ایس او پیز کی تیاری کے بھی احکامات جار ی کردئیے گئے ہیں ۔ فیصلہ میئر اسلام آباد کی جانب سے مسلم لیگ (ن) کے تین چیئرمینوں پرمشتمل کمیٹی اور اسلام آباد سٹیٹ ایجنٹس ایسوسی ایشن کے نمائندوں کی تیارکردہ سفارشات پر کیا گیا ہے ۔ذرائع کے مطابق میئر اسلام آبادو چیئرمین سی ڈی اے شیخ انصرعزیز نے اسلام آباد سٹیٹ ایجنٹس کے ساتھ کامیاب مذاکرات کے بعد لینڈ و اسٹیٹ کے لیے متعدد نئی اصلاحات کی منظوری دے دی ہے جن کے تحت اسٹیٹ ایفیکٹیز کے ریکارڈ کو فوری طورپر کھولنے اور الاٹمنٹ کے عمل میں مزید شفافیت لانے کے اقدامات کیے گئے ہیں۔میئر اسلام آباد و چیئرمین سی ڈی اے شیخ انصرعزیز نے اسلام آبا اسٹیٹ ایجنٹس ایسوسی ایشن کے مطالبے پر مسلم لیگ (ن) کے چیئرمینوں راجہ وحید الحسن ، سردار مہتاب احمد خان اور فرمان مغل پر مشتمل تین رکنی کمیٹی تشکیل دی تھی جس نے اسلام آبا داسٹیٹ ایجنسٹس ایسوسی ایشن کے صدر چوہدری عبدالروف اور جنرل سیکرٹری ارشد محمود عباسی و دیگر کے ساتھ مذاکرات کیے اور سی ڈی اے کے شعبہ اسٹیٹ ایفکیٹز و ون ونڈو آپریشن میں بہتری کے لیے اپنی سفارشات مرتب کیں۔ کمیٹی نے اپنی سفارشات میں سی ڈی اے میں رہائشی و تجارتی جائیدادوں کی منتقلی کے لیے مجسٹریٹ کی تصدیق کو ختم کرکے ڈیلرز / رئیل اسٹیٹ ایجنٹس کی تصدیق کو لازم قرار دیا گیا ہے تمام رجسٹرڈ رئیل اسٹیٹ ایجنٹس کی معاونت کے بغیر جائیداد ٹرانسفر نہیں ہوسکے گی اس مقصد کے لیے ڈیلرز سی ڈی اے کی ون ونڈو کے ساتھ رجسٹرڈ ہونگے سفارشات میں ڈیلرز کی رجسٹریشن کروانے کے لیے ایک ماہ کی مہلت دی جائے گی لینڈ اصلاحات کے تحت تجارتی و رہائشی جائیدادوں کی فیملی ٹرانسفرز کے لیے درکار ریونیو اور بی سی ایس کے این او سیز کو ختم کردیا گیا ہے جبکہ دیگر کیسوں میں این ڈی سی سمیت این او سیز کے سرٹیفکیٹس کی مدت تین ماہ سے بڑھا کر چھ ماہ کردی گئی ہے میئر اسلام آباد نے کمیٹی کی سفارش پر گزشتہ ماہ سربمہر کیا گیا سٹیٹ ایفیکٹیز کار یکارڈ کھولنے کا فیصلہ کیا گیا ہے جبکہ متاثرین کی نئی الاٹمنٹ کی بھی اجازت دے دی گئی ہے تاہم الاٹمنٹ کے عمل کو پہلے سے زیادہ شفاف بنانے کے لیے نئی کمیٹی کی تشکیل اور ایس او پیز بنانے کی بھی ہدایات جاری کی گئی ہیں ۔ میئر اسلام آباد نے کمیٹی کی سفارشات پر ون ونڈ و پر کیفے ٹیریا بنانے کی بھی منظوری دے دی ہے جبکہ ریکارڈ روم میں سی سی ٹی وی کیمرون کی تنصیب سمیت دیگرامور کو فوری طورپر مکمل کرنے کی بھی اجازت دے دی ہے۔ میئر اسلام آباد نے کمیٹی کی سفارشات کی اصولی طورپر منظوری دے دی ہے تاہم معاملے کو پہلے سی ڈی اے بورڈ میں پیش کیا جائے گا جس کے بعد اس کا نوٹیفکیشن جاری کیا جائے گا۔
پراپرٹی ٹرانسفر