آئی ایم ایف اور پاکستانی معیشت

27 اکتوبر 2016
آئی ایم ایف اور پاکستانی معیشت

مکرمی! عالمی مالیاتی ادارے کی سربراہ کرسٹن لیگارڈ پاکستان کے دورے پر ہیں۔ آئی ایم ایف کے کسی سربراہ کا پاکستان کا یہ پہلا دورہ ہے۔ اس دورے میں لیگارڈ نے پاکستانی معیشت کے بارے میں اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ پاکستانی معیشت بحران سے نکلنے کے بعد دنیا کی اُبھرتی ہوئی معیشتوں میں شامل ہو چکی ہے۔ انہوں نے مختصر مدت میں اہداف کے حصول کو موجودہ حکومت کی شاندار کامیابی اور پاک چین اقتصادی راہداری کو ملک کیلئے ترقی کیلئے اہم قرار دیا۔ دیگر بین الاقوامی اداروں اور معاشی ماہرین کی طرح اب آئی ایم ایف کی جانب سے پاکستانی معیشت میں بہتری دراصل ہماری بہتر ہوئی‘ معاشی صورتحال کی گواہی ہے۔ آج سے قریباً تین چار برس قبل ہماری معیشت زبوں حالی کا شکار تھی۔ لیکن بہتر اقتصادی پالیسیوں کے باعث ہمارا ملک اب اقتصادی طور پر مستحکم ہوتا جا رہا ہے۔ بہتر معاشی صورتحال عوام الناس کے لئے مزید فائدہ مند اس وقت ہو گی جب اس مثبت تبدیلی کے اثرات عام آدمی تک منتقل ہونگے۔ ابھی بھی بہت سے پہلو قابلِ توجہ ہیں جن میں سرکاری اداروں میں بدعنوانی سر فہرست ہے جو اصلاحات کا منتظر ہے۔امید کی جاتی ہے کہ معیشت کے کمزور پہلوئوں پر بھی حکومت دلجمعی سے کام کر کے معیشت میں مزید بہتری لائے گی۔ (عشرت اختر نشتر کالونی ۔لاہور)