بے نظیر بھٹو کی پہلی برسی پر بھٹو کے ورثے کیلئے کشمکش ختم نہیں ہوسکی

27 دسمبر 2008
کراچی (رپورٹ یوسف خان) پی پی پی کی قائد بے نظیر بھٹو کی پہلی برسی پر ذوالفقار علی بھٹو کے ورثہ کے لئے کشمکش ختم نہیں ہوئی ہے ۔ پی پی پی کے ذرائع کے مطابق بے نظیر بھٹو کی زندگی میں بھٹو کے ورثہ کے لئے بھٹو خاندان میں شروع ہونے والی کشمکش انکی موت پرختم نہیں ہوئی۔ مرتضی بھٹو نے اس ورثہ کی ملکیت کادعویٰ کیا انکے قتل کے بعد انکی بیوی غنویٰ بھٹو بے نظیر کو چیلنج کرتی رہی ہیں۔ اب وہ اور انکی بیٹی فاطمہ آصف زرداری کی طرف سے پی پی پی کی قیادت سنبھالنے کے ا قدام کو چیلنج کرتی ہیں۔ پی پی پی کے جیالے ذوالفقار علی بھٹو کے بیٹوں شاہنواز ‘ میر مرتضی اور اب بے نظیر کے قتل کو گہری سازش کا نتیجہ قرار دیتے ہیں۔ ان ذرائع کے مطابق پی پی پی میں بے نظیر بھٹو کے قریبی لوگوں کو ایک ایک کرکے الگ کردیا گیا جن میں ناہید خان ‘ صفدر عباسی اور عرس ماما شامل ہیں۔ مخدوم امین فہیم کو وفاقی کابینہ میں شامل کیا گیا ہے جس کا محرک ملکی اور غیر ملکی دبائو ہے۔ کہ قیادت کا خلاء نہ پیدا ہونے دیا جائے۔ آصف زرداری کی قیادت کو جیالوں کا ایک حصہ قبول کرنے کو تیار نہیں جسے بلاول بھٹو پر اعتراض نہیں ہے ۔ پی پی پی میں ’’انٹی زرداری گروپ ‘‘ نے محترمہ بے نظیر بھٹو کی پہلی برسی کے بعد سیز فائر ختم کرنے کا اعلان کیا جو نئے سرے سے مزاحمت شروع کرسکتا ہے۔