5کروڑ جرمانہ ادا نہ کرنے پر سپریم کورٹ نے پلازہ مالک کو گرفتار کرادیا

27 اگست 2009
لاہور(وقائع نگار خصوصی) سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے سالارسینٹر کے مالک رانا نعیم کو 5کروڑ روپے جرمانے کی رقم بروقت بنک میں جمع نہ کروانے پر کمرہ عدالت سے ہی گرفتار کروا دیا ۔مسٹرجسٹس خلیل الرحمن رمدے، مسٹر جسٹس چوہدری اعجاز احمد اور مسٹرجسٹس ثائرعلی مشتمل بنچ نے قرار دیا کہ ہم ملک میں لاقانونیت کے کلچر کو کسی صورت پنپنے نہیں دیں گے ۔یہاں غریب مرتے رہتے ہیں اور سرمایہ دار اے سی کمروں میں ٹی وی کے سامنے بیٹھ کر انکے مرنے کا تماشا دیکھتے رہتے ہیں ۔فاضل عدالت نے یہ ریمارکس کثیر المنزلہ پلازوں کے خلاف لئے گئے از خود نوٹس کیس کی سماعت کے دوران دئیے ۔گزشتہ روز عدالت نے سالار سینٹر کے مالک کو جرمانے کی رقم 5کروڑ روپے بنک میں جمع کروانے کیلئے مہلت دیتے ہوئے ایک گھنٹہ کے اندر اندر جرمانے کی رقم جمع کروانے کی ہدایت کی مگر وہ ایسا کرنے میں ناکام رہے جس پر رانا نعیم کو کمرہ عدالت سے ہی گرفتار کر وا دیا گیا ۔عدالت نے کہا کہ ہم پوری قوم کے دین دار ہیں ۔ عدالت نے جرمانے کی ادائیگی کیلئے مہلت طلب کرنے پر قرار دیا کہ انکی کل کبھی نہیں آئے گی ہمیں آج ہی فیصلہ کرنا ہے ۔اس بلڈنگ کا سٹرکچر خراب ہے اور ہمیں اسے گرانا ہی پڑے گا ۔یاد رہے کہ گزشتہ تاریخ سماعت پر عدالت نے کہا تھا کہ حکومت پنجاب اور ایل ڈی اے بذریعہ ٹیبل کومنٹس فائل کریں کہ کن عمارتوں کے تعمیراتی نقائص ختم کرکے انہیں درست قرار دیا جا سکتا ہے جبکہ کونسی عمارتوں کے تعمیراتی نقائص ختم نہیں کئے جا سکتے۔فاضل عدالت کی طرف سے سالار بلڈزکاچیک بونس ہونے پران کوبھی نوٹس جاری کئے تھے۔