جنوبی وزیرستان : قافلے پر حملہ‘ جھڑپ‘ میجر سمیت 4 اہلکار ‘ 10 شدت پسند جاں بحق

27 اگست 2009
وانا/ سوات (نیوز ایجنسیاں+ وقت نیوز+ ریڈیو مانیٹرنگ) جنوبی وزیرستان میں محسود قبائل کے علاقہ سروکئی سب ڈویژن میں فورسز کے قافلے پر عسکریت پسندوں کے حملے میں میجر امجد رضا سمیت 4اہلکار جاں بحق اور 7زخمی ہو گئے۔ سوات اور مالاکنڈ میں سرچ آپریشن جاری ہے جس کے دوران 24گھنٹے میں اہم کمانڈر کامران سمیت 6شدت پسند جاں بحق اور 12کو گرفتار کر لیا گیا جبکہ منگلور کے علاقے پنجوٹ اور بیش بنٹر سے نامعلوم افراد کی 29نعشیں برآمد ہوئی ہیں۔ نجی ٹی وی کے مطابق طالبان کمانڈر فضل اللہ نے شدت پسندوں کو سوات چھوڑنے کی ہدایت کر دی ہے۔ مہمند ایجنسی میں حکومت کے قومی لشکر میں شامل نہ ہونے کی پاداش میں 800افراد کو پابند سلاسل کرنے کا اقدام عدالت عظمیٰ میں چیلنج کر دیا گیا۔ دریں اثناء جنوبی وزیرستان میں مدی جم میں جیٹ طیاروں نے عسکریت پسندوں کے ٹھکانوں پر گولہ باری کی اور جھڑپوں میں 10شدت پسند جاں بحق ہوئے۔ صوبائی حکومت نے ڈیرہ اسماعیل خان میں غیرقانونی اسلحہ کیخلاف کارروائی کے بعد ڈیرہ اسماعیل خان کیلئے جاری ہونیوالے تمام اسلحہ پرمٹ منسوخ کر دئیے ہیں۔ بتایا جاتا ہے منگل کو رات گئے محسود قبائل کے علاقے سروکئی سب ڈویژن میں سکیورٹی فورسز کے قافلے پر عسکریت پسندوں نے حملہ کر دیا جبکہ تین گاڑیوں کو بھی نقصان پہنچا ہے۔ کالعدم تنظیم تحریک طالبان پاکستان نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔ ترجمان کے مطابق تین ٹینک بھی تباہ کئے گئے ہیں۔ آئی ایس پی آر کے مطابق گذشتہ 24گھنٹوں کے دوران سوات میں 5شدت پسند ہلاک اور 12گرفتار کئے گئے۔ چار باغ میں 10مشکوک افراد کو حراست میں لیا گیا۔ متاثرین مالاکنڈ اور سوات میں متاثرین میں اشیائے خوردونوش کے 12ٹرک تقسیم کئے گئے۔ مٹہ میں 35فٹ لمبی اور 5فٹ چوڑی سرنگ دریافت ہوئی ہے۔ جنوبی وزیرستان کے علاقہ مدی جم میں ہیلی کاپٹروں سے پمفلٹ بھی گرائے گئے جن میں علاقے کو خالی کرنے کا کہا گیا۔ جنوبی وزیرستان میں شنوائی اور اولڈ سروکئی کے درمیان سڑک کھلوانے کیلئے آپریشن کیا گیا تو جھڑپیں شروع ہو گئی جبکہ مینگورہ‘ فضا گٹ اور چارباغ میں صبح 4سے رات 9بجے تک کرفیو میں نرمی رہی‘ انسانی حقوق کمیشن جنوبی ایشیا کے ترجمان اقبال کاظمی نے زیرحراست 800افراد کی رہائی کا مطالبہ کیا ہے۔

مری بکل دے وچ چور ....

فاضل چیف جسٹس کے گذشتہ روز کے ریمارکس معنی خیز ہیں۔ کیا توہین عدالت کا مرتکب ...