مسلم لیگ ن کے قائد سے راجہ ذوالقرنین اور شاہ زین بگٹی کی ملاقاتیں

27 اگست 2009
لاہور (خصوصی رپورٹر) جمہوری وطن پارٹی کے مرکزی چیف کوآرڈی نیٹر نوابزادہ شاہ زین بگٹی اور اُ ن کے ساتھیوں مدنی بلوچ‘ زاہد چودھری کو سابق وزیراعظم میاں نوازشریف نے یقین دہانی کرائی ہے کہ وہ وزیراعظم سید یوسف رضا گیلانی سے بات کرکے انہیں قائل کریں گے کہ ڈیرہ بگٹی سے فوج اور ایجنسیوں کا کردار ختم کیا جائے اور نواب اکبر خان بگٹی کی جائیداد کو اُ ن کے اصل وارثان کو لوایا جائے۔ یہ بات نوابزادہ شاہ زین بگٹی نے نوازشریف سے ملاقات کے بعد بتائی۔ نوازشریف سے جمہوری وطن پارٹی کے رہنمائوں سے ملاقات میں نوازشریف کے سیکرٹری ڈاکٹر آصف سعید کرمانی بھی موجود تھے۔ ذرائع نے بتایا ہے کہ میاں نوازشریف نے 28اگست کو لانگ مارچ کو اس وقت تک ملتوی کرنے کے لئے کہا جب تک وزیراعظم یوسف رضا گیلانی سے ان کی بات چیت نہیں ہوتی اور اس گفتگو کا کوئی مثبت نتیجہ نہیں نکلتا۔ ذرائع نے بتایا ہے کہ نوابزادہ شاہ زین بگٹی اپنے سوتیلے چچا نوابزادہ جمیل بگٹی کی پرویز مشرف کے خلاف نواب اکبر خان بگٹی کے قتل کے سلسلے میں سیشن جج کو دی گئی درخواست کی تاریخ سماعت 2 ستمبر سے پہلے ڈیرہ بگٹی جاکر ڈی پی او ڈیرہ بگٹی کو نواب اکبر خان بگٹی کے قتل کی ایف آئی آر درج کروانے کی درخواست دینے کے خواہش مند ہیں۔ انہوں نے اپنی اس خواہش کا اظہار نوازشریف سے بھی کیا ہے اور اصرار کیا کہ وہ 28اگست کے لانگ مارچ کو ہر حالت میں پروگرام کے مطابق کرنا چاہتے ہیں۔ میاں نوازشریف نے اُ ن سے کہا کہ کم از کم 24گھنٹے مزید انتظار کر لیں اور اگر وہ پروگرام کے مطابق لانگ مارچ کرتے ہیں تو نہ صرف پنجاب حکومت ان کے ساتھ پنجاب کی حدود میں مکمل تعاون کرے گی اور اُ ن (نوازشریف) کی کوشش ہو گی کہ وفاقی حکومت بھی سندھ اور بلوچستان میں ان کی آزادنہ نقل و حرکت کو یقینی بنائے۔ شاہ زین بگٹی نے نوائے وقت کو بتایا کہ وہ لانگ مارچ کے حوالے سے آج (جمعرات کو) حتمی اعلان کرینگے۔