عمران نے ڈرون حملے شروع کرنیوالے کی جعلی ریفرنڈم میں حمایت کی تھی: وفاقی وزرا

26 مئی 2016

لاہور+ اسلام آباد (کامرس رپورٹر+ آئی این پی) وفاقی وزیر اطلاعات وسینیٹر پرویز رشید نے کہا ہے کہ تین سال ضائع کرکے عمران خان زیرو واٹ بلب جلانے کیلئے پلانٹ کا افتتاح کررہے ہیں‘ عمران خان نے ڈرون حملے شروع کرنیوالے کی جعلی ریفرنڈم میں حمایت کی تھی۔ بدھ کو عمران خان کے بیان پر ردعمل دیتے ہوئے وزیر اطلاعات نے کہا کہ وزیراعظم نواز شریف آئینی طریقے سے وزیراعظم منتخب ہوئے ہیں جبکہ عمران خان دھرنا سازشوں کے ذریعے وزیراعظم بننے کے خواب دیکھ رہے ہیں۔ وزیراعظم نواز شریف اب تک دس ہزار میگا واٹ بجلی کا بندوبست کرچکے ہیں اور عمران خان قوم کے تین سال ضائع کرکے زیرو واٹ بلب جلانے کے پلانٹ کا افتتاح کررہے ہیں۔ وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق نے کہا کہ نقل کے لئے بھی عقل چاہئے‘ خیبرپی کے حکومت تو وفاقی حکومت کی نقل کرنے میں بھی ناکام ہے۔ تین سال بعد تین دیہات کیلئے پن بجلی منصوبہ عمران خان کا عوام سے سنگین مذاق ہے۔ خیبر پی کے عوام کو اپنے حکمران عمران خان کا دیدار نصیب ہونے پر مبارک ہو۔ خیبرپی کے میں ایک ارب درختوں نے سلیمانی ٹوپی پہن رکھی ہے جو نظر نہیں آتے۔ خیبرپی کے کی عوام کو عمران خان کا دیدار نصیب ہونے پر مبارکباد دیتا ہوں ۔بہتان تراشی اور جھوٹ کی سیاست عمران اینڈ کمپنی کو نامراد رکھے گی۔خیبر پی کے کے ناکام حکمران نالائقی چھپانے کیلئے مرکزی حکومت کو نشانہ بناتے ہیں۔ تین سال بعد تین دیہات کیلئے پن بجلی منصوبہ عمران خان کا عوام سے سنگین مذاق ہے۔ علاوہ ازیں لاہور میں لیسکو ہیڈ آفس میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزیر مملکت پانی و بجلی عابد شیر علی نے رمضان المبارک میں بجلی کی لوڈ شیڈنگ نہ کرنے کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ رمضان میں سحری و افطاری اور نماز تراویح کے اوقات میں لوڈ شیڈنگ نہیں کی جائے گی ا س مقصد کیلئے رمضان میں انڈسٹری کیلئے 9 سے 10 گھنٹے بجلی کی لوڈشیڈنگ کی جائیگی ۔نیب کو سوا تین ارب روپے کی اوور بلنگ کی انکوائری کا حکم دیدیا ہے۔ جون سے کسان اتحاد کیخلاف بھی ایکشن لیں گے، 6 جون کو پورے پاکستان میں 90 فیصد بجلی کی فراہمی کی ریہرسل کریں گے عمران خان حادثاتی طور پر سیاست میں آہی گئے ہیں تو بدتمیزانہ رویہ ترک کریں ہماری زبان ان سے بھی چھ فٹ زیادہ لمبی ہے۔ عمران کو ہوش نہیں رہتا رات کو سلفیاں بنواتے ہیں اور صبح کمنٹس دیتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ جون 2017ء تک لوڈ شیڈنگ پر 50 فیصد قابو پا لیں گے اور مارچ 2018ء تک سسٹم میں 8سے 10 ہزار بجلی سسٹم میں آ جائے گی۔ جس جس جگہ بجلی کے بل نہیں دیئے جائیں گے وہاں لوڈ شیڈنگ ضرور ہو گی خواہ وہ سندھ ہو ، خیبر پی کے ہو یا کوئی اور صوبہ ہو ۔ انہوں نے کہا کہ بجلی کے بل مانگنے کیلئے جانے والے واپڈا اہلکاروں پر تشدد کی وجہ سے پنجاب کے کئی علاقے نو گو ایریا بنتے جا رہے ہیں ۔میں وزیر اعلی پنجاب اور ائی جی پنجاب سے درخواست کرتا ہوں کہ وہ اس سلسلے میں ہم سے تعاون کریں۔
وفاقی وزراء