نوازشریف کا اسپتال جانے سے انکار، طبی سہولیات جیل ہی میں فراہم کرنے کا مطالبہ

Jul 26, 2018 | 13:22

ویب ڈیسک

 سابق وزیر اعظم اور ن لیگ کے قائد میاں نواز شریف نے اڈیالہ جیل میں معائنہ کرنے والی ڈاکٹرز کی ٹیم کے ہمراہ الٹراساونڈ کے لیے اسپتال جانے سے انکار کرتے ہوئے تمام طبی سہولیات جیل ہی میں فراہم کرنے کا مطالبہ کردیا ہے۔میڈیا رپورٹس کے مطابق پمز اسپتال کے ڈاکٹرز پر مشتمل تین رکنی ٹیم نے اڈیالہ جیل میں سابق وزیراعظم نواز شریف کا معائنہ کیا۔ میڈیکل ٹیم نے مسلم لیگ(ن) کے قائد کی صحت پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کچھ الٹراساونڈ تجویز کیے جس کے لیے ڈاکٹرز نواز شریف کو اپنے ہمراہ اسپتال لے جانا چاہتے تھے تاہم سابق وزیراعظم نے جیل سے باہر جانے سے انکار کرتے ہوئے الٹراساونڈ جیل ہی میں کرانے کا مطالبہ کردیا۔علاوہ ازیں سابق وزیراعظم نواز شریف نے اپنے ذاتی معالج ڈاکٹر عدنان کو بھی میڈیکل ٹیم میں شامل کرنے کا مطالبہ کیا ہے جس کی پمز اسپتال کی میڈیکل ٹیم نے بھی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ ڈاکٹر عدنان 20 سال سے نواز شریف کے پرسنل فزیشن ہیں اور ان کی صحت سے متعلق ہسٹری سے بھی آگاہ ہیں اس لیے ان کی شمولیت سے ٹیم کو فائدہ ہوگا۔دوسری جانب نواز شریف کے پرسنل فزیشن ڈاکٹر عدنان نے نجی ٹی وی سے بات کرتے ہوئے شکوہ کیا ہے کہ وہ بارہ دن سے اڈیالہ جیل کا چکر لگا رہے ہیں لیکن انہیں نواز شریف سے ملنے نہیں دیا جا رہا ہے جس پر انہیں تشویش ہے تاہم اگر انہیں ٹیم میں شامل کرلیا جاتا ہے تو یہ خوش آئند بات ہوگی۔واضح رہے سابق وزیراعظم نواز شریف اڈیالہ جیل میں اسیر ہیں جہاں پانی کی کمی کے باعث ان کی طبیعت خراب ہوگئی تھی جس پر پمز اسپتال کے ڈاکٹر مجاہد، ڈاکٹر شفیق اور ڈاکٹر ذوالفقار پر مشتمل تین رکنی میڈیکل ٹیم تشکیل دی گئی تھی جس نے سابق وزیراعظم کا معائنہ بھی کیا تھا۔

مزیدخبریں