سوئی نادرن گیس پائپ لائن حکام کی ناقص حکمت عملی اورچیک اینڈ بیلنس نہ ہونے کی وجہ سے گیس کی قلت بڑھتی جارہی ہے۔

25 ستمبر 2012 (13:45)

گھریلوصارفین کوگیس کی فراہمی کی بجائے سی این جی سیکٹرکوترجیحی بنیادوں پرنئے کنکشن اورگیس کی فراہمی جاری ہے۔ ذرائع کے مطابق سوئی گیس حکام کی جانب سے  لوڈ منیجمنٹ بہتر نہ کرنے کی وجہ سے پنجاب اورخیبرپختونخوا میں گیس خسارہ بارہ سوملین مکعب کیوبک فٹ تک جاپہنچاہے۔ گیس کی طلب تین ہزار ایم ایم سی ڈی ایف ہے اوراٹھارہ سو ایم ایم سی ایف ڈی گیس نکل رہی ہے۔ چودہ لاکھ کے قریب نئے گھریلوکنکشن کی درخواستیں التوا کا شکارہیں۔ رپورٹ کے مطابق یہی صورتحال رہی تو دوہزار پندرہ تک ملک میں گیس کی شدید قلت پیدا ہوجائےگی۔