تحسین اخلاق

25 ستمبر 2012

٭حضرت ابوہرےرہ رضی اللہ عنہ رواےت کرتے ہےں ۔حضور اکرم صلی اللہ علےہ وسلم نے ارشاد فرماےا : بے شک اللہ تعالیٰ نرمی اور خندہ روی کو پسند فرماتا ہے۔ (بےہقی )
٭ حضرت انس بن مالک رواےت کرتے ہےں ۔جناب رسالت مآب صلی اللہ علےہ وسلم نے ارشاد فرماےا : اچھے اخلاق آدھا دےن ہےں۔(کنز العمال)
٭ حضرت اسامہ بن شرےک رضی اللہ عنہ رواےت کرتے ہےں ۔حضور نبی محترم صلی اللہ علےہ وسلم نے ارشاد فرماےا :لوگوں کو اچھے اخلاق سے بہتر کوئی چےز نہےں دی گئی ۔(طبرانی)
٭ حضرت جرےر رضی اللہ عنہ رواےت کرتے ہےں۔جناب رسالت مآب صلی اللہ علےہ وسلم نے ارشادفرماےا : اگر تم اےسے شخص ہو کہ جسے اللہ نے حسنِ صورت سے نوازا ہے تو تمہےں اپنا اخلا ق بھی خوب صورت بنانا چاہےے۔(ابن عساکر)
٭ حضرت ابوہرےرہ رضی اللہ عنہ رواےت کرتے ہےں ۔حضور اکرم صلی اللہ علےہ وسلم نے ارشاد فرما ےا : تم لوگ اپنے اموال و وسائل کے ذرےعے لوگوں کو وسعت وگنجائش نہےں دے سکتے ،البتہ تمہاری خند ہ پےشانی اور تمہارے اچھے اخلاق ان کی گنجائش کا سبب بن سکتے ہےں ۔(مستدرک ،بےہقی )
٭ حضرت ابوہرےرہ رضی اللہ عنہ رواےت کرتے ہےں ۔حضور سےدالا نبےاءعلےہ الصلوٰ ة والسلام نے ارشاد فرماےا : اللہ تبارک وتعالیٰ نے حضرت ابراہےم علےہ السلام کی طرف وحی ارسال فرمائی ”اے مےرے خلےل اپنے اخلاق کو اچھا ہی رکھےے گا چاہے تمہےں کفّا ر سے واسطہ پڑے ۔اس (عمل سے تم )نےک لوگوں کے مقامات مےں داخل ہوجاﺅ گے۔ اس لےے کہ مےری ےہ بات پہلے ہی اس شخص کے لےے ثابت ہوچکی ہے کہ جو اپنے اخلاق آراستہ کرے گا ،مےں اسے اپنے عرش کے نےچے ساےہ عطا کروں گا، اسے اپنے جوارِا قدس مےں جگہ دوں گا اور اسے پاکےزہ مقام عطاکروں گا۔(طبرانی)
(اس طرح کے خطابات انبےائے کرام کی وساطت سے تمام انسانوں کی تعلےم وتربےت کے لےے ہوتے ہےں ۔ انبےاءکرام کے توخمےر ہی مےں خےر وخوبی گوندھ دی جاتی ہے۔)
٭ حضرت خواص بن سمعان رضی اللہ عنہ رواےت کرتے ہےں ،جناب رسول کرےم صلی اللہ علےہ وسلم ارشاد فرماتے ہےں ۔ نےکی اچھے اخلاق کا نام ہے اور گناہ وہ ہے جو تےرے اپنے دل مےں کھٹک بن جائے اور تو اس بات کو ناپسند کرے کہ لوگ اس (کام)پر مطلع ہوجائےں ۔(ترمذی،بخاری ،فی الادب )
٭ حضرت علی کرم اللہ وجہہ حضور اکرم صلی اللہ علےہ وسلم سے رواےت کرتے ہےں ۔دےن کے بعد عقل کی اساس انسانوں سے محبت کرنا اور ہر نےک و بد سے بھلائی کرنا ہے ۔(بےہقی )