آئین واحد راستہ ہے جس سے ملک کے تمام مسائل حل ہو سکتے ہیں: جسٹس افتخار

25 اکتوبر 2013

اسلام آباد(آن لائن)سپریم کورٹ میں راولپنڈی کی رہائشی ڈاکٹر عابدہ ملک کے لاپتہ شوہر سے مبینہ طور پر جھگڑنے والے حساس ادارہ کے افسر میجر حیدر کی کال کا پولیس نے منبع تلاش کرلیا ، کال میر پور آزاد کشمیر سے عابدہ ملک کے سسر ڈاکٹر اسلم کو کی گئی عدالت نے راولپنڈی پولیس کو حکم دیا ہے کہ وہ آٹھ نومبر تک لاپتہ تاسف ملک کی بازیابی کے حوالے سے جامع رپورٹ پیش کرے ۔ چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے کہا کہ آئین سے کوئی بالاتر نہیں آئین ہی وہ واحد راستہ ہے جس سے ملک کے تمام مسائل حل ہوسکتے ہیں۔ ڈی آئی جی انوسٹی گیشن قیوم نے عدالت کو بتایا کہ انہوں نے نہ صرف تاسف ملک کے والد کو کی جانے والی کالوں کا مرکز تلاش کرلیا ہے بلکہ مذکورہ شخص کا خاکہ بھی تیار کر لیا ہے وہ اس بات کی تصدیق کرتے ہیں کہ تمام کالیں انٹیلی جنس آفس میرپور آزاد کشمیر سے کی گئی تھیں اب وہ حکومت سے رابطے میں ہیں تاکہ ان لوگوں کا ریکارڈ حاصل کیا جا سکے جو اس موقع پر میرپور میں کام کررہے تھے۔ ایڈیشنل اٹارنی جنرل طارق کھوکھر نے بھی عدالت کو بتایا کہ پاک فوج کی جانب سے بھی آزاد کشمیر میں رابطہ کیا گیا ہے اور اس حوالے سے متعلقہ افسر کے حوالے سے معلومات طلب کی گئی ہیں۔ عابدہ ملک کے وکیل انعام الرحیم ایڈووکیٹ نے عدالت کو بتایا کہ یہ سب کچھ تو اس وقت بھی سامنے آگیا تھا جب پولیس افسر تنویر وڑائچ ذاتی طور پر میرپور آزاد کشمیر گیا تھا اور وہاں ساری تفصیلات حاصل کی تھیں اب جبکہ سارے معاملات سامنے آگئے ہیں اب تو تاسف کی بازیابی ہوجانی چاہیے جس پر عدالت نے انہیں اطمینان دلاتے ہوئے کہا کہ عدالت تاسف ملک کی بازیابی کیلئے اپنے دائرہ کار میں رہتے ہوئے اقدامات کرے گی۔