کراچی میں فائرنگ‘ ڈاکٹر سمیت 7 افراد قتل‘ دکان میں دھماکہ‘بچہ جاں بحق

25 اکتوبر 2013
کراچی میں فائرنگ‘ ڈاکٹر سمیت 7 افراد قتل‘ دکان میں دھماکہ‘بچہ جاں بحق

کراچی (کرائم رپورٹر+ نوائے وقت رپورٹ) کراچی میں ٹمبر مارکیٹ میں دکان پر دھماکہ میں بچہ جاں بحق اور 2 افراد زخمی ہو گئے جبکہ فائرنگ کے واقعات میں ڈاکٹر سمیت 7 افراد جاں بحق ہو گئے۔ ڈی آئی جی ساﺅتھ کراچی نے کہا ہے کہ ٹمبر مارکیٹ میں دھماکہ چھوٹی ڈیوائس کا تھا۔ ڈیوائس گودام کے دروازے کے نیچے رکھی گئی تھی۔ بال بیئرنگ استعمال نہیں کئے گئے۔ دریں اثناءڈاکٹر سمیت چار افراد لیاری میں دو گروپوں کے درمیان فائرنگ کے تبادلے میں مارے گئے جس کے بعد لیاری میں حالات کشیدہ ہوگئے اور دکانیں وغیرہ بند کردی گئیں۔ مسلح گروپوں کے درمیان فائرنگ کلری کے علاقے بہار کالونی اور گلستان کالونی میں ہوئی۔ فائرنگ سے ہلاک ہونے والے ڈاکٹر عبدالغنی لیاری جنرل ہسپتال کے آر ایم او تھے، ان کے علاوہ دیگر تین ہلاک شدگان میں عرفان‘ شکیل اور وسیم شامل ہیں جن میں سے ایک وسیم کا تعلق مبینہ طور پر گینگ وار میں ملوث بابا لاڈلا گروپ سے بتایا جاتا ہے جبکہ فائرنگ سے پانچ افراد ظفر‘ ذیشان‘ منظور‘ آصف اور دلباز زخمی ہوئے جنہیں بعد میں سول ہسپتال میں طبی امداد فراہم کی گئی۔ ادھر پیرآباد کے علاقے ایم پیر آر کالونی میں مغل کانٹا کے نزدیک مسلح افراد کی فائرنگ سے ایک شخص صدیق ہلاک اور ایک نوجوان عذیر زخمی ہوگیا۔ سرجانی ٹاﺅن میں عبداللہ موڑ پر بھی نامعلوم افراد نے ایک نوجوان کو فائرنگ کرکے ہلاک کردیا جبکہ اورنگی ٹاﺅن میں تین روز قبل 21 اکتوبر کو فائرنگ سے زخمی ہونے والے شخص علی رضا نے عباسی شہید ہسپتال میں زخموں کی تاب نہ لاکر دم توڑ دیا۔ ٹارگٹڈ آپریشن کے دوران مزید 29 ملزمان کو گرفتار کر لیا گیا۔ ترجمان کے مطابق رینجرز نے مختلف علاقوں میں کارروائیاں کیں۔ ملزمان کے قبضے سے دستی بم سمیت مختلف اقسام کے ہتھیار بھی برآمد کئے گئے۔ آپریشن کے دوران رینجرز نے سنگولین میں کالعدم پیپلز امن کمیٹی کے سربراہ عزیر بلوچ کے گھر پر پھر چھاپا مارا، تاہم اس دوران عزیر بلوچ گھر پر نہیں ملے۔ دریں اثناءکراچی کی انسداد دہشت گردی عدالت نے مختلف کارروائیوں میں گرفتار چار ملزموں کو 14 روزہ ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کر دیا۔ جمعرات کو کرچی کی انسداد دہشت گردی عدالت نے پولیس مقابلوں اور دھماکہ خیز مواد رکھنے کے الزام میں 4 ملزمان تحسین‘ ابرار علی‘ عادل اور عدنان زیدی کو 14 روزہ ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کر دیا۔ دوران سماعت انسداد دہشت گردی عدالت کی جج نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ جج ہر وقت موت کیلئے تیار رہتے ہیں۔ ملزموں کیساتھ مکالمے میں انہوں نے کہا اگر آپ نے کچھ نہیں کیا تو کس بات کا خوف ہے اگر آپ بے قصور ہیں اور مارے گئے ہیں تو جنت میں جاﺅگے اور اگر گناہگار ہیں تو سیدھے دوزخ میں جاﺅگے۔دریں اثنا رات گئے لیاری، گلستان اور بہار کالونی کراچی میں 100 سے زائد مسلح افراد داخل ہو گئے، مسلح افراد کا تعلق گینگ وار گروپوں سے ہے۔ مسلح افراد نے ٹینری روڈ سے گینگ وار کے 5 افراد کو اغوا کر لیا۔ مکین گھروں میں محصور ہو کر رہ گئے۔ دریں اثنا سائٹ کے علاقہ سے ایک بوری بند نعش ملی اسے فائرنگ کرکے قتل کیا گیا تھا۔