ورکنگ باؤنڈی پر فائرنگ سے بھارت خطہ میں امن خراب کرتا ہے۔ ڈی جی چناب رینجرز

25 اکتوبر 2013

سیالکوٹ + پسرور (نامہ نگاران +  نوائے وقت نیوز) ڈی جی چناب رینجرز میجر جنرل طاہر خان نے کہا ہے کہ بی ایس ایف نہتے شہریوں پر فائرنگ کرکے بزدلی کا مظاہرہ کر رہی ہے۔ بی ایس ایف نے اپنی چوکیوں پر بھارتی فوج کے سنائپر شوٹرز بٹھا رکھے ہیں جو نہ صرف ہماری چوکیوں پر  رینجرز کے جوانوں بلکہ شہری آبادی کو بھی نشانہ بناتے ہیں۔ چناب رینجرز کے سیکٹر کمانڈروں کو حکم دے رکھا ہے کہ  بھارتی سول آبادی کو نشانہ نہیں بنانا بلکہ صرف اسی چوکی پر جوابی کارروائی کی جائے جہاں سے پاکستانی علاقہ پر فائرنگ ہو۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے رینجرز ہیڈکواٹر سیالکوٹ میں سیکٹر کمانڈر بریگیڈیئر متین احمد خان کے ساتھ میڈیا سے گفتگو  میں کیا۔ انہوں نے بتایا کہ اگلے سال امریکہ افغانستان سے اپنی فوجوں کو واپس لے جا رہا  ہے اور بھارت کو امریکی فوج کی افغانستان سے واپسی کسی طور قبول نہیں ہے جس کی وجہ سے وہ آئے روز لائن آف کنٹرول اور ورکنگ باؤنڈی پر فائرنگ کرکے خطہ میں امن کو خراب کرنے کی کوشش کرتا ہے۔ چناب رینجرز نے کبھی  ورکنگ باؤنڈری اور لائن آف کنٹرول کی خلاف ورزی نہیں کی اور نہ ہی کبھی فائرنگ میں پہل کی ہے۔ ہمیشہ بی ایس ایف نے ہی ہماری چوکیوں اور زیرو لائن کے دیہات میں آباد سول آبادی کو نشانہ بنایا جس کے جواب میں چناب رینجرز نے بھرپور انداز میں کارروائی کی اور ورکنگ باؤنڈری لائن پر بھارتی چوکیوں اور باڈر پر نصب لائٹس کو نشانہ بنایا۔  پاکستانی علاقہ سے کسی طور بھی کوئی شخص بھارتی علاقہ میں داخل نہیں ہو سکتا کیونکہ باڑ، اس میں نصب گیٹ اور لائٹس کا کنٹرول بی ایس ایف کے پاس ہے۔ بی ایس ایف نے چوکی کے قریب ڈیوٹی پر مامور رینجرز کے جوان اسرار الحق کو سنائپر شوٹر کے ذریعے نشانہ بنایا جو کسی طور پر قابل قبول نہیں کیونکہ یہ دانستہ قتل ہے۔  سیکٹر کمانڈر بریگیڈیئر متین احمد خان نے کہا ہے کہ بھارتی سکیورٹی فورس دس روز سے لائن آف کنٹرول کی خلاف ورزی کرتے ہوئے پاکستان علاقہ پر فائرنگ اور گولہ باری کر رہی ہے، بھارتی اپنے جرم کو نہیں مانتے بلکہ جھوٹ پر جھوٹ بولتے رہیں۔  بھارتی فوج ورکنگ باؤنڈری اور لائن آف کنٹرول پر فائرنگ صرف اسی لئے کر رہی ہے تاکہ دنیا بھر کے توجہ کشمیر کے ایشو سے ہٹائی جائے اور وہ اپنے میڈیا کے ذریعے جھوٹا پراپیگنڈا کرتا رہتا ہے تاکہ سفارتی سطح پر اسے کامیابی مل سکے۔  مقبوضہ کشمیر میں نہتے لوگوں کو قتل کرکے انہیں بارڈر کے ایریا میں لا کر پاکستانی ہونے کا  پراپیگنڈہ کررہا ہے۔  بھارتی فوج میں خودکشی کا رجحان بڑھ رہا ہے اور جب بھی کوئی بھارتی فوجی خودکشی کرتا ہے تو اسے بھی ہمارے کھاتے میں ڈال دیا جاتا ہے۔  بعد ازاں میڈیا کی ٹیم نے سرحدی علاقوں کا دورہ کیا اور وہاں ہونے والے نقصانات کا جائزہ لیا۔ اس موقع پر جوئیاں والی اور عمرانوالی کے لوگوں نے میڈیا کو بتایا کہ بھارتی فوج روزانہ رات کو ہمارے دیہات پر فائرنگ اور گولہ باری کرتی ہے جس کی وجہ سے جوئیاں والی کا نوجوان ساجد چند روز قبل جاں بحق ہوا تھا۔  رات کو اپنے مویشی لے کر دوسرے گاؤں میں چلے جاتے ہیں اور دن کے وقت اپنے گاؤں میں آجاتے ہیں۔  حکومت  بھارت کو  بھرپور جواب دے تاکہ اسے سبق مل سکے۔  نوائے وقت نیوز کے مطابق  بریگیڈئر متین احمد  نے کہا ہے کہ  پاکستان  امریکہ تعلقات  بہتر ہو رہے ہیں  یہی وجہ  ہے بھارت بلااشتعال  فائرنگ کر رہا ہے۔  ہمارے لئے بہت آسان ہے بھارت کو ٹارگٹ کرنا، ہم ان کے روزانہ  سو آدمی مار سکتے ہیں۔ دوسری جانب  بھارت نے الزام عائد کیا ہے کہ  پاکستان نے بین الاقوامی سرحد پر  کمک بھیجنا شروع  کردی ہے اور  جموں وکشمیر ریجن  کے قریب  بڑی تعداد میں  فوجیوں  کو تعینات  کر دیا گیا ہے۔ بھارتی میڈیا نے  بی ایس ایف  ذرائع کے حوالے سے  کہا ہے کہ  پاکستان دشمنی کی حدیں  عبور کرتا  جارہا ہے۔ سیز فائر معاہدے  کی خلاف ورزیوں کے علاوہ بین الاقوامی سرحد پر  چھیڑ  خانی  شروع کردی ہے  اور اس  سلسلہ میں جموں وکشمیر کے قریب  سرحد پر  فوجی کمک  تعینات کرنا شروع کردی ہے۔